بھیجیئے بیٹے کو مولا منتظر ہیں ماتمی
یا امامِ عسکری

داستانِ ظلم مولا اب جہاں سے ختم ہو
جب تلک مہدی نہ آئے روک دیجئے وقت کو
العجل کہہ کے گزرتی جا رہی ہے ہر صدی
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔

ظالموں نے زہر مولا آپکو ایسا دیا
دست و پا کے ناخنوں سے خون جاری ہو گیا
آپ کی غربت کو دیکھا یادِ شبر آ گئی
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔

دفن شہہ نے جس طرح سے اپنے اصغر کو کیا
آ گیا نظروں میں ہائے منظرِ کرب و بلا
اپنی تُربت آپ نے جو گھر میں خود تیار کی
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔

یوں تو سارا ثامرہ تھا رونے والوں میں مگر
ہائے بھائی کہہ کے روئے کوئی تیری لاش پر
اک بہن زینب کے جیسی کاش کے ہوتی تیری
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔

گھر میں داخل ہو گئے تھے ظلم ڈھانے کے لیے
پُرسہ دینے کے بجائے قتل کرنے کے لیے
ڈھونڈتے تھے چاروں جانب تیرے مہدی کو شقی
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔

پردئہ غیبت میں مہدی بھی تڑپ کر رہ گیا
گیارہ صدیوں بعد یہ پھر سے ستم ڈھایا گیا
آپ کے روضے کا گِرنا ہے شہادت دوسری
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔

مادرِ شبیر کا تعمیر روضہ دیکھ لے
گھر میں خالق کے تکلم شہہ کا ماتم دیکھ لے
کم کم سے اتنی بڑھا دو ماتمی کی زندگی
یا امامِ عسکری ۔۔۔۔۔


bhejiye bete ko maula muntazir hai matami
ya imame askari

daastane zulm maula ab jahan se khatm ho
jab talak mehdi na aaye rokhdije waqt ko
al-ajal kehke guzarti jaa rahi hai har sadi
ya imame askari....

zaalimo ne zehr maula aapko aisa diya
dast-o-pa ke nakhoono se khoon jari hogaya
aapki ghurbat ko dekha yaade shabbar aagayi
ya imame askari....

dafn sheh ne jis tarha se apne asghar ko kiya
aagaya nazron may haaye manzare karbobala
apni turbat aap ne jo ghar may khud tayyar ki
ya imame askari....

yun to saara saamra tha rone walon may magar
haye bhai kehke roye koi teri laash par
ek behan zainab ke jaisi kaash ke hoti teri
ya imame askari....

ghar may daakhil hogaye thay zulm dhane ke liye
pursa dene ke bajaye qatl karne ke liye
dhoondte thay charo jaanib tere mehdi ko shaqi
ya imame askari....

pardaye ghaibat may mehdi bhi tadap kar rehgaya
gyara sadiyon baad ye phir se sitam dhaya gaya
aapke roze ka girna hai shahadat doosri
ya imame askari....

madare shabbir ka tameer roza dekhle
ghar may khaaliq ke takallum sheh ka matam dekh le
kam kam se itni badhado matami ki zindagi
ya imame askari....
Noha - Ya Imam e Askari
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online