یاحسین ابن علی یا علی ابن حسین
ہے انہی کا تو لہو دین کی بنیادوں میں
یا حسین ابن علی

صلح شبر سے ملی تھی شہ دیں کو مہلت
کچھ دنوں بعد پھر اٹھائو جو سوال بیعت
دل نے سمجھایا کہ بس آگیا وقت ہجرت
قافلہ لے کے چلے سوئے حرم جو حضرت
زلزلے آنے لگے جبر کے ایوانوں میں
یا حسین ابن علی

ایسے حالات بگاڑے گئے پھر کعبے کے
حرم پاک میں بھی شاہ نہ رہنے پائے
حج کو عمرے سے بدل کر شہ لولاک چلے
اور پھر غیر کے مقتل کی طرف لائے گئے
کچھ ترس کچھ نہیں توحید کے رکھوالوں میں
یا حسین ابن علی

نینوا پر جور کا عاشق شہ جن و بشر
شہ نہ لوگوں سے خریدی وہ زمین محشر
کوفہ و شام سے آتے رہے پیہم لشکر
شب عاشور کو پھر گونجی اذان اکبر
حورت روز چلا روشنی برداروں میں
یا حسین ابن علی

کون سا دکھ ہے وہ دکھ شہ دیں نے نہ سہا
جنگ کرتے ہوئے غازی کو بہت یاد کیا
شہہ مظلوم پہ ہر طرح کا ہتھیار چلا
خنجر و تیغ و تبر پتھر و برچھی چلا
جسم تیروں پہ رہا خون کی بوچھاروں میں
یا حسین ابن علی

آندھیاں چلنے لگی عصر کا آیا
پردہ خیمہ اٹھا اٹھ گیا بیمار امام
حجت حق نے کیا فرق بریدہ کو سلام
حشر تک پھیل گئی شام غریباں کو سلام
جز علی کون ہے عطرت کے نگہہواروں میں
یا حسین ابن علی

قافلہ لے کے چلا دشت بلا سے بیمار
جرس کاروان زنجیر گروں کی جھنکار
گرم ریتی پہ سلگتے ہوئے چھالوں کی بہار
سر کھلے بیبیاں اور سر پہ وہ سہرے کا غبار
کئی اطفال گرے اونٹ سے میدانوں میں
یا حسین ابن علی

قید خانے میں سکینہ کی جو تدفین ہوئی
حرم شاہ کی آزادی کی بنیاد رکھی
گھر میں قاتل کے عزائے شہ دل گیر رکھی
کربلا کیا ہے یہ پہچان تو زینب نے بھی دی
پھر قدم رکھ دیا سجاد نے طوفانوں میں
یا حسین ابن علی

اربعین مرقد سرور پہ کیا عابد نے
غم کی روداد کو نانا سے کہا عابد نے
بعد عاشور بھی ہر ظلم سہا عابد نے
پھر بھی پایا ہے لقب زین العبائ عابد نے
سبھی شاہد ہیں کہ مولا ہیں عزاداروں میں
یا حسین ابن


ya hussain ibne ali ya ali ibne hussain
hai inhi ka to lahoo deen ki buniyaado may
ya hussain ibne....

sulhe shabbar se mili thi shahe deen ko mohallat
kuch dino baad phir uthha jo sawaale bayyat
dil ne samjhaya ke bas aagaya waqte hijrat
khaafila leke chale suye haram jo hazrat
zalzalay aane lagay jabr ke aiwano may
ya hussain ibne....

aise halaat bigaade gaye phir kaabe ke
harame paak may bhi shaah na rehne paaye
haj ko umre se badalkar shahe laulaak chalay
aur phir ghayr ke maqtal ki taraf laaye gaye
kuch taras kuch nahi tauheed ke rakhwalon may
ya hussain ibne....

nainawa par jo ruka ashqe shahe jinno bashar
sheh ne logon se khareedi wo zameene mehshar
kufa-o-sham se aate rahe payham lashkar
subhe ashoor ko phir goonji azane akbar
hurrate rose chala roshni bardaro may
ya hussain ibne....        

kaunsa dukh hai wo dukh shahe deen ne na saha
jung karte hue ghazi ko bahot yaad kiya
shahe mazloom pe har tarha ka hathyar chala
khanjar-o-taygh-o-tabar pathar-o-barchi bhala
jism teero pe raha khoon ki bocharon may
ya hussain ibne....

aandhiyan chalne lagi asr ka aaya hungaam
pardaye qaima utha uthgaya bemaar imam
hujjate haq ne kiya farqe bureeda ko salam
hashr tak phail gayi shame ghariban teri shaam
juz ali kaun hai itrat ke nigehwaron may
ya hussain ibne....

khaafla leke chala dashte bala se bemaar
jarase kaarwan zanjeere garan ki jhankaar
garm reti pa sulagte hue chaalon ki bahaar
sar khule bibiyan aur sar pe wo sehra ka ghubaar
kayi atfaal giray oonth se maidano may
ya hussain ibne....

qaid khane may sakina ki jo tadqeen hui
harame shah ke azaadi ki bunyaad rakhi
ghar may qaatil ke azaye shahe dilgeer rakhi
karbala kya hai ye pehchan tu zainab ne bhi deen
phir qadam rakhdiya sajjad ne toofano may
ya hussain ibne....

arbaeen markhade sarwar pe kiya abid ne
gham ki rodaad ko nana se kaha abid ne
baade ashoor bhi har zulm saha abid ne
phir bhi paaya hai laqab zainul-liban abid ne
sabhi shahid hai ke maula hai azadaron may
ya hussain ibne....
Noha - Ya Hussain Ibne Ali
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Murtaza/Riaz
Download mp3
Listen Online