دے رہا ہے صدا ایک لاشہ
یابنیا الئیا الئیا
سکینہ سکینہ
سوئے دریا نہیں جائو بیٹا

دور دریا ہے لاشے پڑے ہیں
ابھی ظالم وہاں پر کھڑے ہیں
تم کو بھی قتل کر دیں نہ اعدا
یابنیا الئیا الئیا

تم کو اپنے امم سے الفت
کم نہیں کرتے ہم بھی محبت
کیا نہ مانو گی بابا کا کہنا
یابنیا الئیا الئیا

اس طرف دیکھو بیٹا نہ جائو
نیل گالوں کے ہم کو دکھائو
کہہ دو ہم سے جو ہے ان سے شکوہ
یابنیا الئیا الئیا

جا کے تم ان سے شکوہ کرو گی
اس سے تکلیف بھیا کو ہو گی
تجھ سے شرمندہ عمو ہے تیرا
یابنیا الئیا الئیا

ہے پڑے رن میں تلوار و نیزے
زخم کوئی تمہیں آ نہ جائے
دیکھ کر آنا بن ہے اندھیرا
یابنیا الئیا الئیا

کیا انیس حال مقتل سنائے
گونجتی تھیں یہ دو ہی صدائیں
یا سکینہ سکینہ سکینہ
یابنیا الئیا الئیا


de raha hai sada ek laasha
ya bunaiya ilaiya ilaiya
sakina sakina
suye darya nahi jao beta

door darya hai laashe pade hai
abhi zaalim wahan par khade hai
tumko bhi qatl karde na aada
ya bunaiya....

tumko hai apne ammu se ulfat
kam nahi karte hum bhi mohabat
kya na manogi baba ka kehna
ya bunaiya....

us taraf dekho beta na jao
neel gaalon ke humko dikhao
kehdo humse jo hai unse shikwa
ya bunaiya....

jaake tum unse shikwa karogi
is-se takleef bhaiya ko hogi
tujhse sharminda ammu hai tera
ya bunaiya....

hai pade ran may talwaar o naize
zaqm koi tumhe aa na jaaye
dekh kar aana ban hai andhera
ya bunaiya....

kya anees haale maqtal sunaye
goonjti thi ye do hi sadayein
ya sakina sakina sakina
ya bunaiya....
Noha - Ya Bunaiya Ilaiya
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online