ہوتے رہتے تھے جسے ہُلہِ فردوس عطا
وہ شہنشاہِ زمن، جس کو کفن بھی نہ ملا

وہ محمد کا نواسہ، وہ حسین ابنِ علی
گُلشنِ فاطمہ زہرا کی وہ معصوم کلی
نام ہے پنجتنِ پاک میں با حرفِ جلی
حُرمتِ دینِ خدا جس کی شہادت میں ڈھلی
ہوتے رہتے تھے جسے ہُلہِ فردوس عطا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔

جھُولا جبرئیل نے بچپن میں جھُلایا وہ حسین
دوش پر جسکو پیعمبر نے بٹھایا وہ حسین
جس پہ قرآن کے پاروں کا تھا سایہ وہ حسین
پانی دل کھول کے دشمن کو پلایا وہ حسین
ہائے اُس بے کس و نادار کو پانی نہ دیا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔

دشت میں گھیر لیا جس کو بُلا کر مہما ں
سامنے جس کے تڑپتا رہا اکبر سا جواں
کھینچ لی جس نے جواں بیٹے کے سینے سے سِناں
جس کے ہاتھوں پہ ہوا قتل پِسر غنچہ دہن
آخری ناصرِ مظلوم بھی جس کا نہ رہا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔

خوب روتے ہیں جو اپنا کوئی مر جاتا ہے
لاشہ بے والی و وارث کا کفن پاتا ہے
اور ترس کھا کہ اُسے کوئی بھی دفناتا ہے
تعزیت کے لیے دشمن بھی چلا آتا ہے
ہائے افسوس جگر گوشہِ محبوب ِ خدا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔

ہائے پامال ہوئی لاشِ حسین ابنِ علی
بھائی کی لاش پہ مظلوم بہن رو نہ سکی
لاشِ عُریاں پائی لہو، چشم، فلک روتی تھی
کلمہ پڑھتے تھے پیعمبر کا اور ہنستے تھے شقی
لاش پر جمتی تھی خاک اور یہ دیتی تھی صدا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔

پرچمِ حضرتِ عباس اُٹھانے والے
رہیں آباد اعزا خانے سجانے والے
اور سلامت رہیں نوحوں کو سُنانے والے
غمِ سرور میں ہیں جو اشک بہانے والے
فاطمہ زہرا اُنہیں خُلد میں دیتی ہیں دُعا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔

ذکر ِ مولا میں قلم روک نہ اپنا محشر
دیکھ زینب کے نہیں سر پہ ابھی تک چادر
پُرسہ دیتا رہے اشعار سے شہہ کا محشر
رکھ تصور میں کے ہے دشت میں لاشِ سرور
لاشِ عُریاں کو اُڑھاتا رہے نوحوں کی ردا
وہ شہنشاہِ زمن ۔۔۔


hote rehtay thay jisay hulla-e-firdos ata
wo shahensha-e-zaman, jisko kafan bhi na mila

wo muhammad ka nawasa, woh hussain ibn-e-ali
gulshan-e-fatema zahra ki wo masoom kali
naam hai panjatan-e-paak may ba harf-e-jali
hurmatay deen-e-khuda jis ki shahadat may dhali
hote rehtay thay jisay hulla-e-firdos ata
wo shahensha-e-zaman...

jhoola jibreel nay bachpan may jhulaya wo hussain
dosh par jisko payambar nay bithaya wo hussain
jis pay quran kay paaron ka tha saya wo hussain
pani dil khol kay dushman ko pilaya wo hussain
haye us bekas-o-nadaar ko pani na diya
wo shahensha-e-zaman...

dasht may ghayr liya jisko bulakar mehmaan
saamne jis kay tadapta raha akbar sa jawan
khaynch li jis nay jawan bete ke seenay say sina
jis kay haathon pay huwa qatl pisar guncha dahan
aakhri naasir-e-mazloom bhi jis ka na raha
wo shahensha-e-zaman...

khoob rotay hai jo apna koi marjaata hai
laasha be waali-o-waris ka kafan paata hai
aur taras khaake use koi bhi dafnaata hai
taaziyat kay liye dushman bhi chala aata hai
haaye afsos jigar gosha-e-mehboob-e-khuda
wo shahensha-e-zaman...

haaye pamaal huwi laash-e-hussain ibn-e-ali
bhai ki laash pay mazloom bahan ro na saki
laashay urya pai lahu, chasme falaq roti thi
kalma padte thay payambar ka aur hastay thay shaki
laash par jamti thi khaaq aur yeh deti thi sada
wo shahensha-e-zaman...

parcham-e-hazrat-e-abbas uthaane walay
rahe aabad aza-khaane sajaane walay
aur salamat rahay nauhon ko sunanay walay
gham-e-sarwar may hai jo ashk baha nay walay
fatema zahra unhay khuld may deti hai dua
wo shahensha-e-zaman...

zikr-e-maula may qalam rok na apna mehshar
dekh zainab kay nahi sar pay abhi tak chaadar
pursa deta rahay ashaar say sheh ka mehshar
rakh tasawwur may kai hai dasht may laash-e-sarwar
laashe uryaan ko udata rahay nauhoon ki rida
wo shahensha-e-zaman...
Noha - Wo Shehenshah e Zaman
Shayar: Mehshar
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online