وحشت ہے اُداسی ہے زنداں کا اندھیرا ہے
ہر لمحہ سکینہ پر بس آخری لمحہ ہے

بی بی پہ گزرتی ہے کیا رات قیامت کی
اُکھڑی ہوئی سانسیںہیں ٹوٹہ ہوا لہجہ ہے

ظالم نے گوہر تیرے یوںکانوں سے کھینچے ہیں
رہ رہ کے لہو اب تک زخموں سے ٹپکتا ہے

عباس نہ تڑپائو عباس چلے آئو
دروازئہ زنداں ہے اور بالی سکینہ ہے

اشکوں ہی سے دھونا ہے دونوں کا لہو زینب
اک بھائی کا کُرتا ہے اک بچی کُرتا ہے

شبیر کو رُو آئی بے شیر کو کھو آئی
اب تم بھی گئیں بی بی اب ماں کے لیئے کیا ہے

معصوم رسن بستہ خاموش ہوئی آخر
زنجیر نہیں ہلتی سجاد کو سکتہ ہے

یہ حال ہوا بی بی سب کا تیرے ماتم میں
بھیگی ہوئی آنکھیں ہیں اُترا ہوا چہرہ ہے

شاہد کوئی صغرا کو جاکر یہ خبر دے دے
وہ چار برس والی زندان میں تنہا ہے


wehshat hai udaasi hai zindan ka andhera hai
har lamha sakina par bas aakhri lamha hai

bibi pe guzarti hai kya raat qayamat ki
ukhdi hui saansein hain toota hua lehja hai

zaalim ne gohar tere yun kaano se kheynchey hai
reh reh ke lahoo ab tak zakhmo se tapakta hai

abbas na tadpao abbas chalay aao
darwazaey zindan hai aur baali sakina hai

ashkon hi se dhona hai dono ka laho zainab
ik bhai ka kurta hai ik bachi ka kurta hai

shabbir ko ro aayi baysheer ko kho aayi
ab tum bhi gayi bibi ab maa ka liye kya hai

masoom rasan basta khamosh hui aakhir
zanjeer nahi hilti sajjad ko sakta hai

ye haal hua bibi sab ka tere matam may
bheegi hui aankhein hai utra hua chehra hai

shahid koi sughra ko jakar ye khabar de de
woh chaar baras wali zindan may tanha hai
Noha - Wehshat Hai
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali / Razi
Download Mp3
Listen Online