دن تھا عاشور کا شبیر پہ تنہائی تھی
ہر طرف گریہ و ماتم کی گھٹا چھائی تھی
اک بارات کسی دولہا کی وہاں سے گزری
نام نوشاہ کا محضر میں تھا وحبِ قلبی

رُک گیا دشت میں اک سانحہ ایسا دیکھا
ہاتھ سے کنگنا گرا سر سے زمین پر سہرا
وھبِ قلبی نے کہا کس کے ہیں فرزند جناب
بولے شبیر ہیں خاتونِ جناں ماں کا خطاب
باپ میرا ہے علی نانا نبیِ دوسرا
وحبِ قلبی کا یہ سُنتے ہی بدن کانپ گیا

روکے شبیر سے کہتا تھا یہ وحبِ قلبی
زندگی آپ پہ صدقے میرے فرزندِ نبی

شہہ نے فرمایا عروسی کا ہے جوڑا تن پر
اک دولہا کے تو میں رو چُکا ٹکڑے چُن کر

میرا فرزند جواں ہائے وہ میرا اکبر
اُسکی شادی کا تھا ارمان وہ میرا نورِ نظر
کھا کے پھل برچھی کارونے کو مجھے چھوڑ گیا
اپنے ملبوسِ عروسی کو کفن تُو نہ بنا

وحبِ قلبی نے کہا مجھ کو ہے حکمِ مادر
جا میرے لال تُو مدینے میں دولہا بن کر

تیرا شہہ بالا ہے فرزندِ ربابِ مضطر
سہرا اکبر پہ تُو عباس پہ تُو وار دے سر
تیری دولہن کوئی کبریٰ کے برابر تو نہیں
اُسکا آنچل سرِ کلثوم کی چادر تو نہیں

بولے شہہ تُو میرا مہمان ہے وحبِ قلبی
لے برات کو تُو اپنی نکل جا جلدی

اُٹھنے والی ہے ابھی دشتِ بلا میں آندھی
میرا اللہ مبارک کرے تجھ کو شادی
میں تیری لاش پہ روئوں مجھے منظور نہیں
آلِ عمران ہوں میں یہ میرا دستور نہیں

وحب کہنے لگا عمران کے ایمان کی قسم
اب میرے راہِ شہادت سے نہ پلٹیں گے قدم

آپ کو چھوڑ کے اس دشت میں یا شاہِ اُمم
لوٹ جائوں تو خفا ہو نگے رسولِ اکرم
پڑھ لیا کلمئہ توحید مسلماں ہوں میں
آپ کی غربت و مظلومی پہ قرباں ہوں میں

جذبئہ شوقِ شہادت پہ حسین ابنِ علی
بولے آ سینے سے لگ جا میرے وحبِ قلبی

منتظر ہے درِ جنت پہ تیرے حق کے نبی
تیرے باراتی بھی ہیں مقدر کا دہانی
میری نصرت میں اگر سر تیرا کٹ جائے گا
مجھ سے پہلے بھی تُو جنت میں چلا جائے گا

وحبِ قلبی نے کہا خلد نہیں ہے درکار
خلد تو آپ کے قدموں میں پڑی ہے سرکار

آپ راضی ہیں تو جنت کی طلب ہے بے کار
دیجیئے مرنے کی اجازت کے یہ سر تن پہ ہے بار
خلد تو آپ کے مقتل کو بنا دے گا خدا
وحبِ قلبی کا وطن آج سے ہے کرب و بلا

مل گیا عزنِ وغا رن میں قیامت آئی
جائوں اور حر کی طرح اُس نے شہادت پائی
شہہ پُکارے میرا مارا گیا ایک اور بھائی
گھر میں زینب نے اُدھر فرشِ عزا بچھوائی
شدتِ غم سے چچا کر کے سکینہ روئی
بولا شہزادی نہ رونا لاشئہ وحبِ قلبی

اے رضا نارسے نوری ہوا وحبِ قلبی
معسیعت ڈھل گئی جب روئی علی کی بیٹی

زوجہِ وحب سے زینب نے کہا اے بی بی
عمر بھر وحب کی لازم ہوئی پُرسہ داری
ہائے ریحان بیاں کیسے کروں وہ منظر
زوجہِ وحب کو زینب نے اُڑھائی چادر


din tha ashoor ka shabbir pe tanhai thi
har taraf girya o  mtam ki ghata chayi thi
ek baraat kisi dulha ki wan se guzri
naam naushah ka mehzar may tha wehab-e-kalbi

ruk gaya dasht may ek saaneha aisa dekha
haath se kangna gira sar se zameen par sehra
wehab-e-kalbi ne kaha kiske hai farzand janab
bolay shabbir hai khatoone jina maa ka khitaab
baap mera hai ali nana nabi-e-do sara
wehab-e-kalbi ka ye sunte hi badan kaamp gaya

roke shabbir se kehta tha ye wehab-e-kalbi
zindagi aap pe sadqe meri farzande nabi

sheh ne farmaya uroosi ka hai joda tan par
ek dulha ke to mai ro chuka tukde chunkar

mera farzand jawan haye wo mera akbar
uski shadi ka tha arman wo mera noor-e-nazar
khake pal barchi ka rone ko mujhe chor gaya
apne malboose uroosi ko kafan tu na bana

wehab-e-kalbi ne kaha mujhko hai hukme madar
jaa mere laal tu maidan may dulha bankar

tera shehbala hai farzande rabab e muztar
sehra akbar pe tu abbas pe tu waar de sar
teri dulhan koi kubra ke barabar to nahi
uska aanchal sare kulsoom ki chadar to nahi

bolay sheh tu mera mehman hai wehab-e-kalbi
le baraat ko tu apni nikal jaa jaldi

utne wali hai abhi dashte bala may aandhi
mera allah mubarak kare tujhko shadi
mai teri laash pe ro-un mujhe manzoor nahi
aale imran hoo mai ye mera dastoor nahi

wehab kehne laga imran ke emaan ki qasam
ab meri rahe shahadat se na paltenge qadam

aap ko chor ke is dasht may ya shahe umam
laut jaun to khafa hongay rasool-e-akram
padliya kalmaye tuaheed musalman hoo mai
aap ki ghurbat-o-mazloomi pe qurban hoo mai

jazbae shauqe shahadat pe hussain ibne ali
bolay aa seene se lagja mere wehab-e-kalbi

muntazir hai dare jannat pe tere haq ke nabi
tere baraati bhi tu bhi hai muqaddar ka dhani
meri nusrat may agar sar tera kat jayega
mujhse pehle bhi tu jannat may chala jayega

wehab-e-kalbi ne kaha khuld nahi hai darkar
khuld to aap ke qadmo may padi hai sarkar

aap raazi hai to jannat ki talab hai bekar
dije marne ki ijazat ke ye sar tan pe hai baar
khuld to aap ke maqtal ko bana dega khuda
wehab-e-kalbi ka watan aaj se hai karbobala

milgaya izne wighan ran may qayamt aayi
jaun aur hur ki tarha usne shahadat paayi
sheh puakre mera maara gaya ek aur bhai
ghar may zainab ne udhar farshe aza bichwayi
shiddate gham se chacha karke sakina royi
bola shehzadi na rona laashaye wehab-e-kalbi

ay raza naar se noori hua wehab-e-kalbi
maasiyat dhal gayi jab royi ali ki beti

zaujaye wehab se zainab ne kaha ay bibi
umr bhar wehab ki laazim hui pursa dari
haye rehan bayan kaise karoo wo manzar
zaujaye wehab ko zainab ne udhayi chadar
Noha - Wehab e Kalbi
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online