وقتِ رُخصت باپ کا بیٹے کو مُڑ کر دیکھنا
کربلا، کربلا، کربلا، اب انتہائے صبرِ سرور دیکھنا

دور تک جاتے ہوئے ، دیکھا کیئے کیسے حسین
ٹھوکریں کھا کھا کے خود ، سنبھلا کیئے کیسے حسین
اے علی اکبر ذرا، پیچھے پلٹ کر دیکھنا

ماں کے ارمانوں کی چادر، کا عمامہ سر پہ ہے
فاطمہ صغریٰ کی آنکھوں ، کا اُجالا سر پہ ہے
بگڑے گا اک پل میں کتنوں ، کا مقدر دیکھنا

دوش پر بکھری ہوئی، زُلفیں اُڑاتی تھی ہوا
بکھری زُلفوں سے نکھرتی ، جا رہی تھی کربلا
موت کی جُرا،ت نہیں تھی ، آنکھ بھر کر دیکھنا

اُٹھ رہاہے گِر رہا ہے، اک پردہ بار بار
اُمِ لیلیٰ کا یہ خیمہ، ہے میرے پروردگار
لاش جب آئی تو مر ، جائے گی مادر دیکھنا

ہائے مقتل گھُٹنیوں کے ، بل چلا ہے اک پدر
کہتا ہے آواز دے ، مجھ کو میرے نورِ نظر
کھو گئی بینائی میری ، میرے دلبر دیکھنا

اے حسین ابنِ علی ، جائو نہ اکبر کے قریب
ظلم ایسا ہو گیا ہے، تاب لا سکتے نہیں
کیا گوارہ ہے سِناں، سینے کے اندر دیکھنا

امتحاں ہے بوڑھے کاندھوں ، کا جواں بیٹے کی لاش
خون میں ڈوبی کس طرح ، دیکھی گی ماں بیٹے کی لاش
اس جگہ اولاد والو، خود کو رکھ کر دیکھنا

مرتے دم اکبر کو ڈر ہے ، ماں نہ آ جائے کہیں
بہہ رہا ہے خون میرے ، سینے سے رنگیں ہے زمیں
کہہ دو اماں سے مجھے ، یوں نہ تڑپ کر دیکھنا

بابا میری ماں میرے، غم کو اُٹھا سکتی نہیں
نیند ایسی آ رہی ہے، ماں جگا سکتی نہیں
زخم میرا ماں کی نظروں، سے بچا کر دیکھنا

خون ہوتا ہے جگر ، ریحان و سرور اُس گھڑی
سوچتے ہیں حضرتِ ، شبیر کی جب بے کسی
باپ کا رُک رُک کے اور ، بیٹے کا مُڑ کر دیکھنا


waqt-e-ruksat baap ko bete ka mudkar dekhna
karbala , karbala, karbala, ab intehae-e sabre-sarwar dekhna

door tak jaate hue, dekha kiye kaise hussain
thokare kha kha ke khud, sambhla kiye kaise hussain
ay ali akbar zara, peeche palat kar dekhna

maa kay armaano ki chadar, ka amama sar pe hai
fatima sughra ki aankhon, ka ujala sar pe hai
bigdega ek pal may kitno, ka muqaddar dekhna

dosh par bikhri hui, zulfein udati thi hawa
bikhri zulfon se nikharti, ja rahi thi karbala
maut ki jurrat nahi thi, aankh bharkar dekhna

uth raha hai gir raha hai, ek parda baar baar
umme laila ka ye khaima, hai mere par-wardigar
laash jab aayi to mar, jaayegi madar dekhna

haye maktal ghutniyon ke, bal chala hai ek pidar
kehta hai aawaz de, mujhko mere noor-e-nazar
khogayi beenayi meri, mere dilbar dekhna

ay hussain ibne ali, jaao na akbar ke khareeb
zulm aisa hogaya hai, taab la sakte nahi
kya gawara hai sina, seenay ke andar dekhna

imtihan hai boode kandho, ka jawan bete ki laash
khoon mein doobi kis tarha, dekhegi ma bete ki laash
is jagah aulad walon, khud ko rakh kar dekhna

marte dam akbar ko dar hai, maa na aajaye kahin
beh raha hai khoon mere, seene se rangeen hai zameen
kehdo amma se mujhe, yu na tadap kar dekhna

baba meri ma mere, gham ko utha sakti nahin
neend aisi aa rahi hai, maa jaga sakti nahi
zakhm mera maa ki nazron, se bacha kar dekhna

khoon hota hai jigar, rehan-o-sarwar us ghadi
sochte hai hazrat-e, shabbir ki jab bekasi
baap ka ruk ruk ke aur, bete ka mud kar dekhna
Noha - Waqt e Ruqsat
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online