زینب کو اور رُلائے ویران گھروں کی ویرانی
چالیس گھروں میں جا جا کر کس کس کا سوگ منائے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔

ایک آنگن میں اُمِ سلمہ صغرا کے آنسو پوچھے
دل پر اپنے پتھر رکھ کے بی بی سے یہ آکر بولے
صغرا اُٹھ جااِن رستوں سے اب کوئی نہیں جو آئے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔

اک آنگن میں اصغر کے لئے جلتی ہے دھوپ میں دُکھیا
گھر بھر کی نظر ہے سورج پر کب وقت غروب کا ہوگا
اور مادر کویہ فکر ہے کہ یہ سورج ڈوب نہ جائے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔

اک آنگن میں فضہ بیٹھی ہر لمحہ یہی سوچے
جا کر زہرا کی تربت پر کیا بات کنیز یہ بولے
کیسے زینب دربار گئی کیا زہرا کو بتلائے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔

اک آنگن میں بیٹھی ہے ماں یٰس کا سورئہ کھولے
وہ ذکرِ نبی کے لفظوں میں ہمشکلِ نبی کو ڈھونڈے
روضے پہ نبی کے آجائے جب یاد اکبر کی آئے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔

اک آنگن میں عبداللہ اور زینب بیٹھے ہیں تنہا
وہ عون و محمد کے غم میں اک دوسرے کو دیں پُرسہ
دے داد پدر ہر حملے پر جب مادر جنگ سُنائے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔

کل تک اکبر اک زہرا تھی جو بین کیا کرتی تھیں
با با کی جدائی کے غم میں وہ آہیں بھرا کرتی تھیں
اور آج بنی ہاشم کے مکاں سب بیت الحُزن ہیں ہائے
ویرانی،زینب کو اور رُلائے۔۔۔


zainab ko aur rulaaye veeran gharon ki veerani
chalees gharon may jaa jaa kar kis kis ka sogh manaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...

ek aangan may umme salma sughra ke aansu ponchay
dil par apne pathar rakh ke bibi se ye aakar bolay
sughra uthja in raston se ab koi nahi jo aaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...

ek aangan may asghar ke liye jalti hai dhoop may dukhiya
ghar bhar ki nazar hai suraj par kab waqt ghuroob ka hoga
aur maadar ye fikr hai ye suraj doob na jaaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...

ek aanagan may fizza baithi har lamha yehi sochay
jaakar zehra ki turbat par kya baat kaneez ye bolay
kaise zainab darbaar gayi kya zehra ko batlaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...

ek aangan may baithi hai maa yaseen ka sura kholay
wo zikre nabi ke lafzon may hunshakle nabi ko dhoonde
rauze pe nabi ke aajaye jab yaad akbar ki aaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...

ek aangan may abdullah aur zainab baithe hai tanha
wo aun o mohamed ke gham may ek doosre ko de pursa
de daad pidar har humlay par jab maadar jang sunaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...

kal tak akbar ek zehra thi jo bain kiya karti thi
baba ki judaai ke gham may wo aahe bhara karti thi
aur aaj bani hashim ke makan sab baitul huzn hai haaye
veerani, zainab ko aur rulaaye...
Noha - Veerani
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online