یہ کیسی اُداسی ہے
ویران حویلی میں صُغریٰ گھبراتی ہے
اب لوٹ کے آ اکبر بیمار بُلاتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔

پردیس گئے ایسے صغریٰ کی نہ یاد آئی
نانا کے روضے پہ فریاد سُناتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔

قدموں کے نشانوں کو کبھی دیکھ کے روتی ہے
اصغر کا کبھی جھُولا بیمار جھُلاتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔

اب ان دیواروں میں دم گھُٹتا ہے صغریٰ کا
لے کے نام اکبر کا وہ اشک بہاتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔

اکبر کی شادی کا لائیں گے پیام چچا
اس آس پہ وہ سہرے بھائی کے بناتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔

اُلجھا ہوا برچھی میں اکبر کا جگر دیکھا
اس خواب کی صغریٰ کو تعبیر رُلاتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔

شام کے ڈھلتے ہی بڑھ جاتی ہے تنہائیجب
جواد دیئے صغریٰ اشکوں کے جلاتی ہے
ویران حویلی میں ۔۔۔


ye kaise udasi hai
veeran haveli may sughra ghabrati hai
ab laut ke aa akbar bemaar bulati hai
veeran haveli may....

pardes gaye aise sughra ke na yaad aayi
nana ke rouze pe faryaad sunaati hai
veeran haveli may....

khadmon ke nishano ko kabhi dekh ke roti hai
asghar ka kabhi jhoola bemaar jhulati hai
veeran haveli may....

ab in deewaron may dam ghut-ta hai sughra ka
leke naam akbar ka wo ashq bahati hai
veeran haveli may....

akbar ki shaadi ka layenge payaam chacha
is aas pe do sehre bhai ke banati hai
veeran haveli may....

uljha hua barchi may akbar ka jigar dekha
is khaab ki sughra ko tabeer rulaati hai
veeran haveli may....

jab shaam ke dhalte hi bad jaati hai tanhayi
jawaad diye sughra ashkon ke jalati hai
veeran haveli may....
Noha - Veeran Haveli May
Shayar: Jawaad
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online