اُٹھتا نہیں ہے لاشہ شبیرِ ناتواں سے
عباس جلد آئو نہرِ رواں دواں سے

لیلیٰ تڑپ کے بولی اے میرے لال مت جا
رخصت جو تجھ کو کر دے لائوں وہ دل کہاں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

انصاف چاہتی ہے اُجڑی ہوئی جوانی
ہر خم کمر پدر سے ہر اک ضعیف ماں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

دل بے تحاشا کر کے فوجِ یزید روئی
کیا جانے کیا کہا تھا بے شیر نے زباں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

کانپ اُٹھتی روحِ انساں ناوق لگا گلے پر
یوں مسکرا کے اصغر رُخصت ہوئے جہاں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

لاشہ ہے شہہ کا عُریاں مجبور ہے بہن بھی
سر پر ردا نہیں ہے لائے کفن کہاں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

اتنا تو سوچ ظالم بھاری ہے طوق و بیڑی
رہوار اُٹھے گا کیوں کر بیمار و ناتواں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

روتی ہے جب سکینہ بابا کو یاد کر کے
ہلتا ہے قید خانہ معصوم کی فغاں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔

بخشش کی اک سند ہے نوحہ تمہارا آغا
مل کر رہے گی جنت ہاں مالکِ جناں سے
اُٹھتا نہیں ہے ۔۔۔۔۔


uth-ta nahi hai laasha shabbir-e-natawan se
abbas jald aao nehre rawan dawan se

laila tadap ke boli ay mere laal mat ja
ruqsat jo tujko karde la-un wo dil kahan se
uth-ta nahi hai....

insaaf chahti hai ujhdi hui jawani
har qam kamar pidar se har ek zaeef maa se
uth-ta nahi hai....

dil be-tahasha karke fauje yazeed royi
kay jaane kya kaha tha baysheer ne zaban se
uth-ta nahi hai....

kaamp ut-thi roohe insan nawak laga galay par
yun muskurake asghar ruqsat hue jahan se
uth-ta nahi hai....

laasha hai sheh ka uryan majboor hai behan bhi
sar par rida nahi hai laaye kafan kahan se
uth-ta nahi hai....

itna to soch zaalim bhaari hai tauq-o-baydi
rehwaar uthega kyon kar beemar-o-natawan se
uth-ta nahi hai....

roti hai jab sakina baba ko yaad karke
hilta hai qaid-khana masoom ki fughaan se
uth-ta nahi hai....

bakshish ki ek sanad hai nowha tumhara agha
milkar rahegi jannat haa maalike jina se
uth-ta nahi hai....
Noha - Uthta Nahi Hai Laasha
Shayar: Agha Anwar Ali
Nohaqan: Jawad-ul-Hassan
Download Mp3
Listen Online