اُٹھّو سکینہ اُٹھّو جاتا ہے کارواں
تیرے بغیر جانی کیسے جیئے گی ماں
زنداں کا یہ اندھیرا ہوتا کہاں سویرا
پردیس میں سکینہ غمخوارکون تیرا
زخمی ہیں کان تیرے چھینی ہیں بالیاں
اُٹھّو۔۔۔۔

قبرِ بتول تنہا ویران ہے مدینہ
کربوبلا میں اصغر زندان میں سکینہ
دل کو ہلا رہی ہے اصغر کی ہچکیاں
اُٹھّو۔۔۔۔

ماں جا رہی ہے بی بی ویران گود لے کر
òکربوبلا کے بن میں اپنا سہاگ دے کر
کیسے مدینے جائوں سب کچھ تو ہے یہاں
اُٹھّو۔۔۔۔

صغرا کاسامنامیں کیسے کروں بتادے
پوچھے گی جب وہ مجھ سے میں کیا کہوں بتادے
امّاں میری سکینہ کھو آئی ہو کہاں
اُٹھّو۔۔۔۔

میں اِس گھڑی سے پہلے اے کاش مر ہی جائوں
کس کس کو کیا بتائوں کس کس سے منہ چھپائوں
پوچھیں گی مجھ سے آکر جب ساری بیبیاں
اُٹھّو۔۔۔۔

دل غم سے ہے دوپارہ ہمیں شامیوں نے مارا
عباس بھی نہیں ہے جو بڑکے دے سہارا
جنگل میں سو رہی ہیںساری نشانیاں
اُٹھّو۔۔۔۔

عرفان غمِ سکینہ ہے دُکھ بھری کہانی
یہ دُکھ بھری کہانی ناصر کی ہے زبانی
میں سوچتا ہوں اب بھی کیسے کروں بیاں
اُٹھّو۔۔۔۔


utho sakina utho jaata hai kaarwaan
tere baghair jaani kaise jiyegi maa
zindaan ka ye andhera hota kahan savera
pardes may sakina ghamkhaar kaun tera
zaqmi hai kaan tere cheeni hai baaliyan
utho..........

khabre batool tanha veeran hai madina
karbobala may asghar zindaan may sakina
dil ko hila rahi hai asghar ki hichkiyaan
utho.........

maa jaa rahi hai bibi veeran godh lekar
karbobala ke ban may apna suhaag dekar
kaise madinay jaaun sab kuch to hai yahaan
utho..........

sughra ka saamna mai kaise karoon batade
poochegi jab wo mujhse mai kya kahoon batade
amma meri sakina kho aayi ho kahaan
utho............

mai is ghadi se pehle ay kaash mar hi jaaun
kis kis ko kya bataaun kis kis se moo chupaaun
poochegi  mujhse aakar jab saari bibiyan
utho...............

dil gham se hai do-para hame shaamiyon ne maara
abbas bhi nahi hai jo badke de sahara
jungle may so rahi hai saari nishaniyan
utho..........

irfan ghame sakina hai dukh bhari kahani
ye dukh bhari kahani nasir ki hai zabani
mai sochta hoon ab-bhi kaise karoon bayaan
utho........
Noha - Utho Sakina Utho
Shayar: Irfan
Nohaqan: Nasir Zaidi
Download Mp3
Listen Online