یہ میں ہوں میں میری تنہائی، یہ تما شائی
لو آئی گیارہ محرم ہے کیا خبر لائی
چلی جانبِ زنداں تمہاری ماں جائی
سوار ہم نے کیاتھا تمہیں میرے بھائی
اب آئو یا مجھے کہہ دو نہ انتظار کرو
اُٹھو حسین بہن کو ذرا سوار کرو

سوار ہم نے کیا تھا تمہیں دمِ رُخصت
لگام تھامی تھی میں نے بحالت رِ کت
کہاں گئی وہ محبت ، کہاں گئی چاہت
عمامہ اپنا میرے سر پہ، سایہ بار کرو
اُٹھو حسین بہن ۔۔۔۔۔

وطن سے دُور ہوں کچھ اور دُور جاتی ہوں
اُٹھو اُٹھو میرے بھیا،تمہیں جگاتی ہوں
کوئی بھی آتا نہیں میں جسے بُلاتی ہوں
قرار جان میرے مجھ کو نہ بے قرار کرو
اُٹھو حسین بہن ۔۔۔۔۔

سفر مدینے سے کیسا تھا یہ سفر کیسا ہے
نہ مہملیں ہیں نہ ہودج نہ کوئی پردہ ہے
ہے سر میں خاک یہ کرب و بلا کا صحرا ہے
نہ جی سکوں گی تیرے بعد اعتبار کرو
اُٹھو حسین بہن ۔۔۔۔۔

درِ فرات پہ اے سونے والے جاگ ذرا
علم کے سائے میں رُخصت بہن کو کر بھیا
سُنا ہے سخت کٹھن ہے یہ شام کا رستہ
بہن یہ راستہ عباس سے، نامدار کرو
اُٹھو حسین بہن ۔۔۔۔۔

میں آئوں گی میرے بھیا ضرور آئوں گی
کفن اُڑھائوں گی مرقد تیری بنائوں گی
جہاں بھی جائوں گی فرشِ اعزا بچھائوں گی
میں قید کاٹ کے لوٹ آئوں انتظار کرو
اُٹھو حسین بہن ۔۔۔۔۔

رگوں میں خون بدن میں جو سانس جاری ہے
تمہاری سرور و ریحان ذمہ داری ہے
جہاں جہاں میرے بھائی کی پُرسہ داری ہے
تم اپنے نوحوں سے دُنیا کو سوگوار کرو
اُٹھو حسین بہن ۔۔۔۔۔

اب آئو یا مجھے کہہ دونہ انتظار کرو
اُٹھو حسین بہن کو ذرا سوار کرو


ye mai hoo mai meri tanhayi, ye tamashayi
lo aayi gyaara moharram hai kya khabar laayi
chaliye jaanibe zindaan tumhari maajayi
sawaar hum ne kiya tha tumhe mere bhaai
ab aao ya mujhe kehdo na intezaar karo
utho hussain bahan ko zara sawaar karo

sawaar hum ne kiya tha tumhe dam-e-rukhsat
lagaam thaami thi maine bahaa late riqqat
kahan gayi wo mohabbat, kahan gayi chahat
amama apna mere sarpe, saaya baar karo
utho hussain bahan.....

watan se door hoo kuch aur door jaati hoo
utho utho mere bhayya, tumhe jagaati hoo
koi bhi aata nahi mai jisay bulaati hoo
qaraar jaan mere mujko na beqaraar karo
utho hussain bahan.....

safar madinay se kaisa tha ye safar kya hai
na mehmilay hai na haudaj na koi parda hai
hai sar may khaaq ye karbobala ka sehra hai
na jee sakungi tere baad aetbar karo
utho hussain bahan.....

dare furaat pe ay sonay walay jaag zara
alam ke saaye may ruqsat bahan ko kar bhayya
suna hai sakht kathan hai ye shaam ka rasta
behn ye raasta abbas se, naamdaar karo
utho hussain bahan.....

mai aaungi mere bhayya zaroor aaungi
kafan udaaungi markhad tera banaaungi
jahan bhi jaaungi farsh-e-aza bichaaungi
My qayd kaat ke laut aau intezaar karo
utho hussain bahan.....

ragon may khoon badan may jo saans jaari hai
tumhari sarwar-o-rehan zimmedari hai
jahan jahan mere bhai ki pursadari hai
tum apne nowho se duniya ko sogwaar karo
utho hussain bahan.....

ab aao ya mujhe kehdo na intezaar karo
utho hussain bahan ko zara sawaar karo
Noha - Utho Hussain Bahan
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online