اُٹھ جائو علی اصغر
آنکھیں تو ذرا کھولو ایسے تو نہیں رُوٹھو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر

لوری تجھے سُنائوں گی جھولا جھُلائوں گی
اشکوں سے تیرا چہرا اصغر میں دھُلائوں گی
آواز میری سُن کر للہ ذرا جاگو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔

سورج تو جا چُکا ہے ہونے لگا اندھیرا
تاریک شام آئی بھولو نہ گھر کا راستہ
میں ڈر رہی ہوں بھیا جنگل میں ڈر نہ جائو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔

اماں تو بے خبر ہیں میداں میں کیا ہوا ہے
لیکن مجھے خبر ہے زخمی تیرا گلا ہے
حاضر ہیں اشک میرے زخموں کو اپنے دھو لو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔

خوشبو تیرے لہو کی سانسوں میں آ رہی ہے
تم آئو اگر نہ میری اب جان جا رہی ہے
دل کہہ رہا ہے میرا بھائی کو اپنے رو لو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔

آ کر دیکھائو چہرا دم گھُٹ رہا ہے میرا
میں بھی تو دیکھوں بھیا ہے زخم کتنا گہرا
اب میرے صبر کو تم اصغر نہ اور تولو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔

یہ خالی خالی جھولا مجھ کو ستا رہا ہے
تیرے بغیر اصغر دل ڈوبا جا رہا ہے
تم کو جو رن سے لائے آواز دوں میں کس کو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔

ریحان جب سکینہ یہ بین کر رہی تھی
اصغر کی ماں بھی اُس کا نوحہ یہ سُن رہی تھی
کہتی تھی اے سکینہ یہ بات اب نہ بولو
کچھ بولو میرے بھیا اصغر
اُٹھ جائو علی اصغر ۔۔۔۔۔
آنکھیں تو ذرا ۔۔۔۔۔


uthjao ali asghar
aankhein to zara kholo aise to nahi rootho
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar

lori tujhe sunaungi jhoola jhulaungi
ashkon se tera chehra asghar mai dhulaungi
awaaz meri sunkar lillah zara jaago
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....

suraj to ja chuka hai hone laga andhera
tareek shaam aayi bhoolo na ghar ka rasta
mai dar rahi hoo bhaiya jangal may dar na jao
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....

amma to bekhabar hai maidan may kya hua hai
lekin mujhe khabar hai zakhmi tera gala hai
haazir hai ashk mere zakhmo ko apne dholo
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....

khusboo tere lahoo ki sanson may aa rahi hai
tum aao agar na meri ab jaan jaa rhai hai
dil keh raha hai mera bhai ko apne rolo
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....

aa kar dikhao chehra dam ghut rahah hai mera
mai bhi to dekhun bhaiya hai zakhm kitna gehra
ab mere sabr ko tum asghar na aur tolo
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....

ye khaali khaali jhoola mujhko sata raha hai
tere baghair asghar dil dooba ja raha hai
tumko jo ran se laaye awaaz doo mai kisko
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....

rehaan jab sakina ye bain kar rahi thi
asghar ki maa bhi uska nauha ye sun rahi thi
kehti thi ay sakina ye baat ab na bolo
kuch bolo mere bhaiya asghar
uthjao ali asghar....
aankhein to zara....
Noha - Uthjao Ali Asghar
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online