اُٹھا کوئی جنازہ پھر سیدہ کے گھر سے
حسرت برس رہی ہے ایک ایک بام و در سے

یہ کس کو رو رہی ہے زینب تڑپ تڑپ کر
جنت میں سیدہ نے چادر گِرا دی سر سے
اُٹھا کوئی جنازہ ۔۔۔۔۔

جس نے خُدا کے گھر کو بخشی تھی آ کہ زینت
وہ آج ہو ریا ہے رُخصت خُدا کے گھر سے
اُٹھا کوئی جنازہ ۔۔۔۔۔

ہے بند آنکھ شاید آرام آ گیا ہے
مولا تڑپ رہے تھے اُنیس کی سحر سے
اُٹھا کوئی جنازہ ۔۔۔۔۔

زینب کے بازوئوں کو شبیر چومتے ہیں
کیا جانیئے علی نے کیا کہہ دیا پسر سے
اُٹھا کوئی جنازہ ۔۔۔۔۔

قاتل کو اپنے ٹھنڈا شربت پلانے والے
بے چین ہو رہا ہے خود زہر کے اثر سے
اُٹھا کوئی جنازہ ۔۔۔۔۔

کُوفے کا ذرہ ذرہ روتا ہے خوں کے آنسو
محروم ہو رہے ہیں حسنین اب پِدر سے
اُٹھا کوئی جنازہ ۔۔۔۔۔


utha koi janaza phir sayyeda ke ghar se
hasrat baras rahi hai ek ek bam o dar se

ye kisko ro rahi hai zainab tadap tadap kar
jannat may sayyeda ne chadar gira di sar se
utha koi janaza....

jisne khuda ke ghar ko bakshi thi aake zeenat
wo aaj ho raha hai ruqsat khuda ke ghar se
utha koi janaza....

hai bandh aankh shayad aaram aa gaya hai
maula tadap rahe thay unnees ki sehr se
utha koi janaza....

zainab ke baazuon ko shabbir choomte hai
kya jaaniye ali ne kya keh diya pisar se
utha koi janaza....

qaatil ko apne thanda sharbat pilane wala
bechain ho raha hai khud zehr ke asr se
utha koi janaza....

koofe ka zarra zarra rota hai khoon ke aansoo
mehroom ho rahe hai hasnain ab pidar se
utha koi janaza....
Noha - Utha Koi Janaza

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online