اونچا رہے اپنا علم
جب تک ہے دورِ آسماں
سُن لیں گے ہر پیر و جواں
آواز پر شبیر کی بڑھتا رہے یہ کارواں
رُکنے نہ پائے ایک قدم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

ہر قلب پر چھاتے چلو
دُنیا کو بتلاتے چلو
اک اک محاذِ ظُلم کی تصویر دکھلاتے چلو
ہر دل میں بھر دو شِہ کا غم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

کب تک نہ مانیں گا کوئی
وہ وقت آئے گا کبھی
ہر قلب پر چھاتا رہا اپنا حُسین ابنِ علی
اس در پہ ہر سر ہو گا خم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

جب بھی کوئی مُشکل پڑی
دُنیا اسی در پر جھُکی
سینوں پر بل کھا کر ادھراُٹھی صدائے یا علی
نکلا اُدھر باطل کا دم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

یہ پرچمِ عباس ہے
ٹوٹے دلوں کی آس ہے
اب تک اسی پرچم تلے زندہ کسی کی پیاس ہے
جس نے سہے لاکھوں ستم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

عباس ہے نامِ وفا
آغاز و انجامِ وفا
مُنہ موڑ کہ دریا سے جو پیتا رہا جامِ وفا
ہوتے رہے بازو قلم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

وہ تیرِ بانیئے جفا
معصوم کا ننھا گلا
اسلام زندہ کر گئی اصغر کے مرنے کی ادا
ہنس کر سہا تیرِ ستم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

زندہ ہے ھل مِن کی صدا
مٹتا نہیں خوں کا لکھا
شبیر کو حق کی قسم اک ماکدائے کربلا
جو سلسلہ ہو گا نہ کم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

اے نوجوانانِ اعزائ
تم ہو کسی دل کی دعا
تا حشر اُٹھتی ہی رہے سینوں سے ماتم کی صدا
قائم رہے اکبر کا غم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

جب کربلا یاد آئے گی
انسانیت شرمائے گی
مظلوم کی آواز ہے دل میں اُترتی جائے گی
پلٹیں گے پھر بہکے قدم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔

زندہ یہ بیداری رہے
یہ سلسلہ جاری رہے
ہم ہوں نہ ہوں اس بزم میں قائم اعزاداری رہے
نکلے اسی چوکھٹ پہ دم
اونچا رہے ۔۔۔۔۔


uncha rahe apna alam
jab tak hai daure aasman
sunlenge har teero jawaan
awaaz par shabbir ke badta rahe ye kaarwaan
rukne na paaye ek qadam
uncha rahe....

har qalbo par chaate chalo
dunya ko batlaate chalo
ek ek mahaaze zulm ki tasveer dikhlate chalo
har dil may bhar do sheh ka gham
uncha rahe....

kab tak na maanega koi
wo waqt aayega kabhi
har qalb par chaata raha apna hussain ibne ali
is dar pe har sar hoga qam         
uncha rahe....

jab bhi koi mushkil padi
dunya isi dar par jhuki
seeno pe balkhaakar idhar uthi sadaaye ya ali
nikla udhar baatil ka dam
uncha rahe....

ye parchame abbas hai
toote dilon ki aas hai
ab tak isi parcham tale zinda kisi ki pyas hai
jisne sahe laakhon sitam
uncha rahe....

abbas hai naame wafa
awaaz-o-anjaame wafa
moo mod ke darya se jo peeta raha jaame wafa
hote rahe baazu qalam
uncha rahe....

wo teere baani-e-jafa
masoom ka nanha gala
islam zinda kargayi ashgar ke marne ki ada
haskar saha teere sitam
uncha rahe....

zinda hai halmin ki sada
mitta nahi khoon ka likha
shabbir ka haq ki qasam ek maa ke daahe karbala
jo silsila hoga na kam
uncha rahe....

ay nowjawane azaa
tum ho kisi dil ki dua
ta hashr uth-ti hi rahe seeno pe matam ki sada
qaayam rahe akbar ka gham
uncha rahe....

jab karbala yaad aayegi
insaniyat sharmayegi
mazloom ki awaaz hai dil may utarti jaayegi
palthenge phir behke qadam
uncha rahe....

zinda ye bedaari rahe
ye silsila jaari rahe
hum ho na ho is bazm may khayam azadari rahe
nikle isi shaukath pe dam
uncha rahe....
Noha - Uncha Rahe Apna Alam

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online