غریبِ زہرا پہ کیا وقت ہے غریبی کا
گریباں چاک ہے بالوں میں خاکِ کربوبلا
تلاش کرتے ہیں رستہ نظر نہیں آتا
یہ حال دیکھ کے ہنستے ہیں شہ پہ اہلِ جفا
بہن کے کاندھوں پر کُل کائنات لاتے ہیں
قدم قدم پہ یہ آواز دیتے جاتے ہیں

اُمِ لیلیٰ سنبھال زینب کو
لا رہا ہوں میں لاشہئ اکبر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔

بولے ہونگے حسین یہ روکر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔

نوجواں لاش ہے ضعیفی ہے
میری نظروں سے دیکھ منظر کو
کیسے ہمشیر کو سنبھالوں گا
میں سنبھالے ہوئے ہوں اکبر کو
تیرا احسان ہوگا یہ مجھ پر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔
لا رہا ہوں میں۔۔۔

اس کے سینے سے کہکے نامِ علی
میں برچھی ابھی نکالی ہے
امتحاں دے چکی میری غربت
اب تیری بے کسی کی باری ہے
تُوبھی اس وقت یاعلی کہہ کر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔
لا رہا ہوں میں۔۔۔

دو نگینے تھے اِسکی جھولی میں
دونوں اکبر پہ کر دئیے صدقہ
صبر ایسا کہ اپنے بیٹوں پر
میں نے روتے اِسے نہیں دیکھا
ہے مگر اب یہ لاشئہ اکبر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔
لا رہا ہوں میں۔۔۔

روک رکھا ہے اپنے اشکوں کو
سب سے چھپ چھپ کے آہیں بھرتی ہے
میں سمجھتا ہوں مادرِ اکبر
تیری ممتا پہ جوگزرتی ہے
رکھ کے اپنے کلیجے پر پتھر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔
لا رہا ہوں میں۔۔۔

کیسے لاشے جواں اُٹھائے ہوں
ایڑیاںخط بناتی آتی ہیں
اِن نشانوں کو پیچھے پیچھے میرے
اماں زہرا مٹاتی آتی ہیں
اُس کی نظریں نہ دیکھیں یہ منظر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔
لا رہا ہوں میں۔۔۔

اے تکلم وہ شام و کوفہ کا
طے ہوا ہوگا اِس طرح سے سفر
اماں زینب سنبھالنا ماں کو
کہتے ہونگے سناں سے یہ اکبر
اورہوگا حسین کے لب پر
اُمِ لیلیٰ سنبھال۔۔۔
لا رہا ہوں میں۔۔۔


ghareeb e zehra pa kya waqt hai ghareebi ka
gareban chaak hai balon may khaak e karbobala
talaash karte hai rasta nazar nahi aata
ye haal dekh ke haste hai sheh pa ahle jafa
behan ki kaandhon par kul kaayenat laate hai
qadam qadam pe ye awaaz dete jaate hai

umme laila sambhaal zainab ko
laa raha hoo mai laashaye akbar
umme laila sambhaal....

bolay honge hussain ye rokar
umme laila sambhaal....

naujawan laash hai zaeefi hai
meri nazron se dekh manzar ko
kaise hamsheer ko sambhalunga
mai sambhale hue hoo akbar ko
tera ehsaan hoga ye mujh par
umme laila sambhaal....
laa raha hoo mai....

iske seene se kehke naame ali
maine barchi abhi nikaali hai
imtehan de chuki hai meri ghurbat
ab teri bekasi ki baari hai
tu bhi is waqt ya ali keh kar
umme laila sambhaal....
laa raha hoo mai....

do nageene thay iski jholi may
dono akbar pe kar diye sadqa
sabr aisa ke apne beton par
maine rote isay nahi dekha
hai magar ab ye laashaye akbar
umme laila sambhaal....
laa raha hoo mai....

rok rakha hai apne ashkon ko
sab se chup chup ke aahe bharti hai
mai samajhta hoo maadare akbar
teri mamta pe jo guzarti hai
rak ke apne kaleje par pathar
umme laila sambhaal....
laa raha hoo mai....

kaise laashe jawan uthaye hoo
aediyan khat banati aati hai
in nishano ko peeche peeche mere
amma zehra mitati aati hai
uski nazrein na dekhe ye manzar
umme laila sambhaal....
laa raha hoo mai....

ay takallum wo shaam o koofa ka
tay hua hoga is taraf se safar
amma zainab sambhaalna maa ko
aur hoga hussain ke lab par
umme laila sambhaal....
laa raha hoo mai....
Noha - Umme Laila Sambhaal
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online