اُجڑے ہوئے کنبے کی عزادار ہے زینب
اے شامِ غریباں تیری سالار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔

پتھر یہاں کھانے ہیں یہاں پینے ہیں آنسو
یثرب نہیں یہ شام کا بازار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔

کٹتے ہوئے بھائی کا گلا دیکھ رہی ہے
لاچار ہے بے بس ہے دلافگار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔

تاریخ کے سینے میں ہے محفوظ ابھی تک
وہ خُطبہ جو تیرا سرِ دربار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔

تم کیسے اُٹھائو گی بھلاداغِ جدائی
شبیر سے تم کو تو بہت پیار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔

لے آئو اُسے آگ کے شعلوں سے بچا کر
شعلوں میں گرا عابدِ بیمار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔

لکھا ہے ظفر خون سے تاریخ کے رُخ پر
باطل کے لیے آہنی دیوار ہے زینب
اُجڑے ہوئے کنبے کی ۔۔۔۔۔


ujde hue kumbe ki azadaar hai zainab
ay shame gharebaan teri salaar hai zainab
ujde hue kumbe ki....

pathar yahan khane hai yahan peene hai aansu        
yasrab nahi ye shaam ka bazaar hai zainab
ujde hue kumbe ki....

kat-te hue bhai ka gala dekh rahi hai
lachaar hai bebas hai dilafgaar hai zainab
ujde hue kumbe ki....

tareekh ke seene may hai mehfooz abhi tak
wo khutba jo tera sare darbaar hai zainab
ujde hue kumbe ki....

tum kaise uthaogi bhala daaghe judaai
shabbir se tumko to bahot pyar hai zainab
ujde hue kumbe ki....

le aao usay aag ke sholo se bachakar
sholo may ghira abide bemaar hai zainab
ujde hue kumbe ki....

likha hai zafar khoon se tareekh ke rukh par
baatil ke liye aahani deewaar hai zainab
ujde hue kumbe ki....
Noha - Ujde Hue Kumbe
Shayar: Zafar
Nohaqan: Mirza Sikander Ali
Download Mp3
Listen Online