اُبلتا ہے سمندر خون کا اللہ کے گھر سے
علی زخمی ہوئے ہیں آج شمشیرِ ستمگر سے

علی کی بیک علی پر زندگی آنسُو بہاتی ہے
صدا یہ اَل فراق آتی ہے ہر اک تارے بستر سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔

پریشان سُرخ چہرا سرد ہے اور سُرخ ہیں آنکھیں
یتیمی کیا ہے پوچھو آج عباسِ دلاور سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔

دلِ اسلام سے ہوک اُٹھتی ہے ایمان روتا ہے
مُسلّے پر جو بہتا ہے نمازی کا لہو سر سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔

دلِ اُمُ البنین کو بیوگی کا غم اُٹھانا ہے
سہاگن زندگی خوںرو رہی ہے دیدئہ تر سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔

تڑپ اے فطرتِ اسلام مولا جانے والے ہیں
پیامِ اِرجعی آنے کو ہے اللہ کے گھر سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔

سُنی ہی جس کے کانوں سے حدیثِ راس کراسی
وہ پوچھے غم علی کی موت کا قبرِ پیعمبر سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔

جنازہ کُلِ ایمان کا علی فطرت جب اُٹھے گا
نہ جانے حال کیا زینب کا ہو گا غم کے خنجر سے
اُبلتا ہے سمندر۔۔۔۔۔
علی زخمی ہوئے ہیں ۔۔۔


ubhalta hai samandar khoon ka allah ke ghar se
ali zakhmi huwe hai aaj shamsheere sitamgar se

ali ki bek-ali par zindagi aansu bahati hai
sada-ye al-feraq aati hai har ek tare bistar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....

pareshan surq chehra sard hai aur surq hai aankhein
yateemi kya hai poocho aaj abbas-e-dilaawar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....

dil-e-islaam se houk ut-thi hai imaan rota hai
musallay par jo behta hai namazi ka lahoo sar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....

dile ummul-baneen ko be-wagi ka gham uthana hai
suhagan zindagi khoon ro rahi hai deedaye tar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....

tadap ay fitrate islam moula jaane waale hai
payame irjaee aane ko hai allah ke ghar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....

suni hai jiske kaanon ne hadees-e-raas karasi
wo pooche gham ali ki mauth-ka khabre payambar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....

janaza kulle-imaan ka ali fitrat jab uth-tega
na jaane haal kya zainab ka hoga gham ke khanjar se
ubhalta hai samandar....
ali zakhmi huwe hai....
Noha - Ubhalta Hai Samandar

Shayar: Maulana Ali Fitrat