ٹوٹ گئی آس ٹوٹ گئی آس میری ٹوٹ گئی آس

دیر ہوئی میرے چچا جاں کو سدھارے
اکبر و بابا ہیں گئے نہرکنارے
اماں میرا قلب جلاپیاس کے مارے
ڈوبتے جاتے ہیں میرے دل کے سہارے
ٹوٹ ۔۔۔۔۔

ثانیئے زہرا یہ بُکا کرتی ہے رو کر
تم سے تو ڈھارس تھی مجھے میرے برادر
بابا کا فرمان ہوا اب تو مقدر
چھین کے لے جائیں گے اعدا میری چادر
ٹوٹ ۔۔۔۔۔

پیٹ کے سر کہتی ہے فروا میرے عباس
قتل ہوا ابنِ حسن میں ہوئی بے آس
آئے نہ تم دینے کو پُرسہ بھی میرے پاس
ہوتا ہے اب تیری حیا داری کا احساس
ٹوٹ ۔۔۔۔۔

نظروں میں پھرتا ہے ابھی تک وہی منظر
عاشور کی شب تیری وفا نقش ہے دل پر
کیا کر کے تجھے روئے کرے نالہ یہ خواہر
اب تو ہی بتا مجھے اے میرے برادر
ٹوٹ ۔۔۔۔۔

ہائے میرے ننھے سے اصغر کے چچا جاں
بانوئِ شبیر بہت تم پہ تھی نازاں
پیاسا ہی مر جائے گااب اصغرِ ناداں
گھر کے اُجڑ جانے کا بھی ہو گیا ساماں
ٹوٹ ۔۔۔۔۔

ہے چاک گریبان فُغاں کرتی ہے لیلیٰ
اکبر میرا اب بن نہ سکے گاکبھی دُلہا
ٹکڑے ہوا سب حسرت و ارماں کا کلیجہ
کیا دیکھتے ہی دیکھتے یہ ہو گیا بھیا
ٹوٹ ۔۔۔۔۔

تاریخ نے مقتل میں انیس اس طرح لکھا
وہ سینہ زنی ا ور قیامت کا تھا گریہ
سر پیٹتے تھے زیرِ علم دلبرِزہرا
سوکھے ہوئے ہونٹون پہ تھا پُردرد یہ نوحہ
ٹوٹ ۔۔۔۔۔


toot gayi aas toot gayi aas meri toot gayi aas

dayr hui mere chacha jaan ko sidhaare
akbar o baba hai gaye nehr kinare
amma mera qalb jala pyas ke maare
doobte jaate hai mere dil ke sahare
toot............

saniye zahra ye buka karti hai rokar
tumse to dhaaras thay mujhe mere biradar
baba ka farmaan huwa ab tho muqadar
cheen ke le jayenge aada meri chaadar
toot............

peet ke sar kehti hai farwa mere abbas
qatl huwa ibne hasan mai hui beaas
aaye na tum dene ko pursa bhi mere paas
hota hai ab teri hayadaari ka ehsaas
toot...............

nazro me phirta hai abhi tak wohi manzar
ashoor ki shab teri wafa naqsh hai dilpar
kya karke tujhe roye sare naala ye qahar
ab tu hi batade mujhe ay mere biradar
toot................

haaye mere nanhe se asghar ke chacha jaan
banu e shabbir bahut tumpe thi nazaan
pyasa hi marjayega ab asghare nadaan
ghar ke ujad jaaneka bhi hogaya saaman
toot.............

hai chaak girebaan fughaan karti hai laila
akbar mera ab ban-na sakega kabhi dulha
tukde hua sab hasrato armaan ka kalayja
kya dekhte hi dekhte ye hogaya bhaiya
toot..........

tareekh ne maqtal may anees is tarha likha
wo seena zani aur qayamat ka tha girya
sar peete thay zere alam dibare zehra
sukhe hue hoton pe tha pudard ye noha
toot...........
Noha - Toot Gayi Aas
Shayar: Anees
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online