تھی کربلا میں حق کو ضرورت حسین کی
لگتی وطن میں کیسے ہائے طبیعت حسین کی
تیروں کی چھائوں میں وہ امامت حسین کی
رن میں سپر بنی ہے جماعت حسین کی

حُر بار بار کہتا تھا دم توڑتے ہوئے
جی بھر کے کر سکا نہ میں نصرت حسین کی
تھی کربلا میں حق کو

دامن چھڑا سکے نہ سکینہ سے شاہ دیں
رخصت کے وقت غیر تھی حالت حسین کی
تھی کربلا میں حق کو

مقتل میں جب سکینہ نے بابا کو دی صدا
تڑپی تڑپ کے رہ گئی میت حسین کی
تھی کربلا میں حق کو

آیا ہے تم سے قید میں ملنے سر حسین
اٹھو سکینہ کر لو زیارت حسین کی
تھی کربلا میں حق کو

اُم رباب سائے میں بیٹھی نہ عمر بھر
روتی تھیں یاد کر کے مصیبت حسین کی
تھی کربلا میں حق کو

چھینے گا کون تجھ سے زمانے میں جیتے جی
محشر تیرا قلم ہے امانت حسین کی
تھی کربلا میں حق کو


thi karbala may haq ko zaroorat hussain ki
lagti watan may kaise haaye tabiyat hussain ki
teeron ki chaon may wo imamat hussain ki
ran me sipar bani hai jamaat hussain ki

hurr baar baar kehta tha dum todte hue
jee bhar ke kar saka na mai nusrath hussain ki
thi karbala may....

daaman chuda sake na sakina se shaahe deen
ruqsat ke waqt ghair thi halat hussain ki
thi karbala may....

maqtal may jab sakina ne baba ko di sada
tadpi tadap ke rehgayi maiyat hussain ki
thi karbala may....

aaya hai tumse qaid my milne sare hussain
utho sakina karlo ziyarat hussain ki
thi karbala may....

umme rabab saaye may baithi na umr bhar
roti thi yaad karke musibat hussain ki
thi karbala may....

cheene ga kaun tujhse zamane may jeete ji
mehshar tera qalam hai amanat hussain ki
thi karbala may....
Noha - Thi Karbla May
Shayar: Mehshar
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online