بابا میرے بابا
تیری زہرا پہ مصیبت کی گھڑی ہے
ہائے بابا

کیسے دروازہ ہٹائوں
کیسے محسن کو بچائوں
سانس سینے میں روکی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

ہاتھ میں جس کے میرا ہاتھ دیا تھا تم نے
کہہ کے من کنتُ جسے مولا کہا تھا تم نے
میں نے ہر موڑ پہ بابا ساتھ اُس کا ہے نبھایا
ہاں میرا جرم یہی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

تیری اُمت نے بنا دی ہے یہ حالت بابا
کوئی پسلی بھی نہیں میری سلامت بابا
سانس لیتی ہوں میں جس دم رکنے لگتا ہے میرا دم
صرف مرنے کی کمی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

کبھی دربار میں پیشی کو بلاتے ہیں ہمیں
کبھی دروازے پہ آآ کے ستاتے ہیں ہمیں
میرے یہ پھول سے بچے پوچھتے ہیں یہی مجھ سے
کیا خطا ہم سے ہوئی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

شرم آتی ہے بھلا تم کو بتائوں کیسے
یہ تماچوں کے نشاں تم کو دیکھائوںکیسے
تم نہ پہچان سکوگے دیکھ کر مجھ کو کہوگے
کیا میری زہرا یہی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

یہ اذیت یہ خاموشی نہیں دیکھی جاتی
مجھ سے تنہائی علی کی نہیں دیکھی جاتی
تیرا پیغام سنانے حق ولایت کا بتانے
زہرا گھرگھرمیں گئی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

آپ کے سوگ میںتاریک نہ دیکھا گیا گھر
آگ دروازے پہ اُمت نے لگا دی آکر
بابا جان بعد تمہارے دیکھیئے گھر میں ہمارے
روشنی کیسے ہوئی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔

قبرِ زہرا سے تکلم یہ صدا آتی ہے
کتنی صدیوں سے میری قبر پہ ویرانی ہے
پھول تُربت پہ چڑھانے ایک دیا لا کے جلانے
کیا مدینے میں کوئی ہے
تیری زہرا پہ۔۔۔


baba mere baba
teri zehra pe musibat ki ghadi hai
haye baba

kaise darwaza hataun
kaise mohsin ko bachaun
saans seene may ruki hai
teri zehra pe...

haath may jiske mera haath diya tha tumne
kehke man kunto jisay maula kaha tha tumne
maine har mod pe baba saath uska hai nibhaya
haa mera jurm yehi hai
teri zehra pe...

teri ummat ne banadi hai ye haalat baba
koi phasli bhi nahi meri salamat baba
saans leti hoo mai jis dum rukne lagta hai mera dum
sirf marne ki kami hai
teri zehra pe...

kabhi darbaar may peshi ko bulaate hai hamay
kabhi darwaze pe aa aa ke satate hai hamay
mere ye phool se bache poochte hai yehi mujhse
kya khata humse huwi hai
teri zehra pe...

sharm aati hai bhala tumko bataun kaise
ye tamachon ke nishan tumko dikahun kaise
tum na pehchan sakoge dekh kar mujhko kahoge
kya meri zehra yehi hai
teri zehra pe...

ye aziyat ye khamoshi nahi dekhi jaati
mujhse tanhai ali ki nahi dekhi jaati
tera paigham sunane haq wilayat ka batane
zehra ghar ghar may gayi hai
teri zehra pe...

aap ke sog may tareek na dekha gaya ghar
aag darwaze pe ummat ne lagadi aakar
baba jaan baad tumhare dekhiye ghar may hamare
roshni kaise huwi hai
teri zehra pe...

qabre zehra se takallum ye sada aati hai
kitni sadiyon se meri qabr pe veerani hai
phool turbat pe chadane ek diya laake jalaane
kya madine may koi hai
teri zehra pe...
Noha - Teri Zehra Pe Musibat
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online