تیری زینب نے تیرا دین بچایا نانا
تیرے اسلام پہ چادر کو لُٹا یا نانا

ایسے گُزری سرِ بازار کے جاں سے گُزری
تھے تماشائی تیری آل جہاں سے گُزری
آئے پتھر بھی مگر سر نہ اُٹھایا نانا

تیرے دُشمن کی رونق کو مٹانے کے لیے
اور سوتے ہوئے ذہنوں کو جگانے کے لیے
میں نے خطبہ سرِ دربار سُنایا نانا

نانا زینب تیری جس شہر کی شہزادی تھی
میری ہر سانس میرے حال پہ فریا دی تھی
سر جھُکا جاتا تھا بازار جب آیا نانا

کلمہ گویوں نے مجھے سنگ بھی مارے لیکن
شام کے لوگ مسلمان تھے سارے لیکن
کوئی پُرسہ مجھے دینے کو نہ آیا نانا

یہ ملا اجر مسلمانوں سے بتلائوں گی
اور یہ زخم میں اماں کو ہی دِکھلائوں گی
میں نے بازو کا نشاں سب سے چھُپایا نانا


teri zainab ne tera deen bachaya nana
tere islam pe chadar ko lutaya nana

aisi guzri sare bazaar ke jahan se guzri
thay tamashai teri aal jahaan se guzri
aaye pathar bhi magar sar na uthaaya nana

tere dushman ki raunat ko mitane ke liye
aur sotay huwe zahno ko jagane ke liye
maine khutbaat sare darbaar sunaaya nana

nana zainab teri jis shehr ki shahzadi thi
meri har saans mere haal pe faryadi thi
sar jhuka jaata tha bazaar jab aaya nana

kalma goyon ne mujhe sang bhi maaray lekin
shaam ke log musalman thay saaray lekin
koi pursa mujhe dene ko na aaya nana

yeh mila ajar musalmano se batlaungi
aur yeh zakhm mai amma ko hi dikhalungi
maine baazu ka nishan sab se chupaya nana
Noha - Teri Zainab Ne

Nohaqan: Anj. Shababul Momineen
Download Mp3
Listen Online