شبیر یہ سب دُنیا تیرے نام سے زندہ ہے
یہ دین محمد کا تیرے نام سے زندہ ہے
اللہ کا بھی کلمہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

پھیلی ہیں زمانے میں توحید کی تنویریں
گونجی ہیں تیرے دم سے کونین میں تکبیریں
حق اس سے ہے پائندہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

منی کی سند بخشی تجھے سرورِ عالم نے
پھر یہ بھی کہا میں ہوں شبیر تیرے دم سے
شبیر تیرا نانا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

فطرُس تو فرشتہ تھا حُر کو بھی اماں دی ہے
جاں ابنِ مظاہر کو اور دین کو بخشی ہے
یہ دینِ نبی حق کا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

والفجر میں تُو شامل تطہیر میں تُو شامل
کوثر کی مودت کی تفسیر میں تُو شامل
والعصر کا بھی سورئہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

عہدِ نبوی علوی دورِ حسنی کے بعد
اسلام تنِ بے جاں اکسٹھ ہجری کے بعد
تیرے نام سے زندہ تھا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

بیعت بھی نہ لے پایا سر بھی نہ جھُکا پایا
ظالم کو کیا رُسوا سرور نے سرِ نیزہ
قرآن بھی اے آقا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

ویسے تو شہادت ہے میراث تیرے گھر کی
یاں اصغر و اکبر کی تفریق نہیں پھر بھی
مفہوم شہادت کا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

اُمت پہ محمد کیہوا شیطانوں کا راج
مکہ بھی مدینہ بھی تیرے بعد ہوا تاراج
یہ تو لاجِ کعبہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

یہ جو علم کا چرچہ ہے شبیر کا صدقہ ہے
احسان تیرا حق پر یہ ثانیئے زہرا ہے
اے شبیر کا سجدہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

سرور کی نشانی اب کوئی بھی نہیں باقی
اک چھوڑ دی جنگل میں اک شام میں دفنا دی
دُکھ بانوئے مضطر کا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

سائے کی ضرورت ہے نہ ہی ٹھنڈے پانی کی
ماں کہتی تھی اصغر کی بُلوا لو مجھے والی
یہ کنیز شاہِ والا تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

ماں کا بھی نہ رکھا مان نہ ہی پالنے والی کا
دن رات وظیفہ اور نوحہ تھا یہ لیلیٰ کا
اکبر یہ تیری آیت تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

آئیں گے مجھے لینے اک روز میرے بھّیا
پھر بیاہ رچائوں گی میں شوق سے بھّیا کا
اکبر وہ تیری صغریٰ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

شبیر کی لختِ جگر اک رات کی وہ بیاہی
رُخصت بھی نہ ہو پائی اور بیوہ کہلائی
قاسم وہ تیری بیوہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

عاشور سے زنداں تک رُوداد مظالم کی
تُو نے ہی سُنائی ہے شبیر کی شہزادی
یہ ماتم یہ نوحہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔

شبیر کا مرثیہ خواں شبیر کا شاعر بھی
پہچان یہی ہے اب تیرے سبطِ جعفر کی
صد شُکر تیرا بندہ تیرے نام سے زندہ ہے
شبیر یہ سب ۔۔۔۔۔


shabbir ye sab dunya tere naam se zinda hai
ye deen mohamed ka tere naam se zinda hai
allah ka bhi kalma tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

phaili hai zamane may tauheed ke tanveere
goonji hai tere dam se kaunain may takbeere
haq is se hai payinda tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

minni ki sanad bakshi tujhe sarware aalam ne
phir ye bhi kaha mai hoo shabbir tere dam se
shabbir tera nana tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

fitrus to farishta tha hurr ko bhi aman di hai
jaan ibne mazahir ko aur deen ko bakshi hai
ye deene nabi haq ka tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

walfijr may tu shaamil tatheer may tu shaamil
kausar ki mawaddat ki tafseer may tu shaamil
wal-asr ka bhi soora tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

ahde nabawi alawi daure hassani ke baad
islam tane bejaan ik-sat hijri ke baad
tere naam se zinda tha tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

bayyat bhi na le paaya sar bhi na jhuka paaya
zaalim ko kiya ruswa sarwar ne sare naiza
quran bhi ay aaqa tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

waise to shahadat hai meeras tere ghar ki
yan asgharo akbar ki tafreeq nahi phir bhi
mafhoom shahadat ka tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

ummi pa mohamed ki hua shaitano ka raaj
makkah bhi madina bhi tere baad hue taraaj
ye to laaje kaaba tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

ye jo ilm ka charcha hai shabbir ka sadqa hai
ehsan tera haq par ye saniye zehra hai
ay shabbir ka sajjada tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

sarwar ki nishani ab koi bhi nahi baakhi
ek chor di jangal may ek shaam may dafna di
dukh bano-e-muztar ka tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

saaye ki zaroorat hai na hi thande pani ki
maa kehti thi asghar ki bulwa lo mujhe wali
ye kaneez shahe wala tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

maa ka bhi na rakha maan na hi paalne wali ka
din raat wazeefa aur noha tha ye laila ka
akbar ye teri ayaat tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

aayenge mujhe lene ek roz mere bhaiya
phir byah racha-ungi mai shauq se bhaiya ka
akbar wo teri sughra tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

shabbir ki laqte jigar ek raat ki wo byahi
ruqsat bhi na ho payi aur bewa kehlayi
qasim wo teri bewa tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

ashoor se zindan tak rodaad mazalim ki
tune hi sunayi hai shabbir ki shehzadi
ye matam ye noha tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....

shabbir ka marsiyaqan shabbir ka shayar bhi
pehchan yehi hai ab tere sibte jaffar ki
sab shukr tera banda tere naam se zinda hai
shabbir ye sab....
Noha - Tere Naam Se Zinda Hai
Shayar: Ustad Sibte Jafar
Nohaqan: Ustad Sibte Jafar
Download mp3
Listen Online