تیرا گھر ہو گیا ویرانا اے نانا فریاد ہے

کہتی تھی زینبِ مضطر اے نانا فریاد ہے
آئی ہوں بھائی کو کھو کر اے نانا فریاد ہے

اصغرِ ناداں تشنہ دہن،مارا گیا وہ غنچہ دہن
تیرِ ستم کھا کر، اے نانا فریاد ہے

اکبر و اصغر مارے گئے،عون و محمد مارے گئے
کر ب و بلا میں لُوٹے گئے ،اے نانا فریاد ہے

بالی سکینہ روتی تھی باپ کے غم میں نہ سوتی تھی
مر گئی زندان میں آ کر، اے نانا فریاد ہے

شب کو رچی شادی،صبح ہوئی بربادی
خاک ہے دولہن کے سر پر، اے نانا فریاد ہے

بھائی کو مہمان بُلا کر،ہائے ہائے شمرِ ستمگر
حلق پہ پھیرا خنجر، اے نانا فریاد ہے

بارہ گلے اور اک رسن،مرزا تھا یہ رنج و محن
بندھے تھے رسی میں کس کر، اے نانا فریاد ہے


tera ghar hogaya veerana ay nana faryaad hai

kehti thi zainabe mustar ay nana faryaad hai
aayi hoo bhai ko khokar ay nana faryaad hai

asghar-e-naadan tash nadahan, maara gaya wo ghunchadahan
teere sitam khaakar, ay nana faryaad hai

akboro-ashgar maarey gaaye, auno-muhammad maare gaye
karbobala may lootay gaye, ay nana faryaad hai

baali sakina roti thi baap ke gham may na soti thi
margayi zindaan may aakar, ay nana faryaad hai

shab ko rachi shaadi, subho huyi barbaadi
khaakh hai dulhan ke sar par, ay nana faryaad hai

bhai ko mehmaan bulakar, haye haye shumr-e-sitamgar
halq pe phera khanjar, ay nana faryaad hai

baara galay aur ek rasan, mirza tha yeh ranjo-mehan
baandhe thay rassi may kaskar, ay nana faryaad hai
Noha - Tera Ghar Hogaya

Shayar: Mirza Murtaza Ali