طے کیا کیسے سفر پہنے بیڑیاں عابد
سر کھلے تھیں ناقوں پر ساتھ بیبیاں عابد

تین دن کے پیاسے تھے اور شدت تپتی
اس نے کر دیا ہو گا کتنا نیم جاں عابد
طے کیا کیسے سفر

سربریدہ نیزوں پر رن میں بے کفن لاشے
کیسے دیکھا آنکھوں نے ہائے وہ سماں عابد
طے کیا کیسے سفر

بے کجا وہ اونٹوں پر ہیں حرم برہنہ سر
سر جھکائے جاتے ہیں بن کے سروراں عابد
طے کیا کیسے سفر

جلتے خیموں کا منظر پھرتا تھا نگاہوں میں
اٹھتے دیکھ لیتے تھے جب کہیں دھواں عابد
طے کیا کیسے سفر

طوق ہتھکڑی پہنے کیسے قبر کھودی تھی
اس طرح سے دفنائی شاہ دیں کی جاں عابد
طے کیا کیسے سفر

جب بھی جام پانی کا سامنے نظر آیا
روتے تھے وہ پیاسے پر لے کے ہچکیاں عابد
طے کیا کیسے سفر

ذکر تشنہ کاموں کا ہے صبح شام کرتا ہے
یوں انیس ہے تجھ پر آج مہربان عابد
طے کیا کیسے سفر


tay kiya safar kaise pehne baydiya abid
sar khule thi naqon par saath bibiyan abid

teen din ke pyase thay aur shiddate tapti
usne kardiya hoga kitna neemjaan abid
tay kiya safar....

sar burida naizo par ran may bekafan laashe
kaise dekha aankhon ne haaye wo sama abid
tay kiya safar....

bekaja wa oonton par hai harram barehna sar
sar jhukaye jaate hai banke saarwa abid
tay kiya safar....

jalte qaimo ka manzar phirta tha nigaho may
ut-tay dekhlete thay jab kahin dhuan abid
tay kiya safar....

tauq hatkadi pehne kaise qabr khodi thi
is tarha se dafnayi shah-e-deen ki jaan abid
tay kiya safar....

jab bi jaam pani ka saamne nazar aaya
rote thay wo pyase par leke hichkiya abid
tay kiya safar....

zikr tashnakamo ka suboh shaam karta hai
yun anees hai tujhpar aaj mehrbaan abid
tay kiya safar....
Noha - Tay Kiya Safar
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online