تر خون میں ہوئی حیدر کی جبیں
یوں روتے ہیں جبریلِ امیں
یا علی یا علی

یہ تیغ چلی کس کے سر پر
زخمی ہوئے سجدے میں حیدر
کیوں ہلنے لگا ہے عرشِ بریں
تر خون میں ۔۔۔

کرتی ہیں اذانیں واویلا
مسجد کا صحن ہے فرشِ اعزا
حیدر کے لہو سے تر ہے زمیں
تر خون میں ۔۔۔

کیوں روزے دار پہ ظلم کیا
تُو نے بنِ ملجم یہ تو بتا
شک ہو گئی کیوں مولا کی جبیں
تر خون میں ۔۔۔

حسنین کے سر سے سایہ اُٹھا
مغموم ہوئی کعبے کی فضا
مرقد میں نبی کو چین نہیں
تر خون میں ۔۔۔

وہ شاہِ ارب وہ شیرِ خُدا
وہ نفسِ نبی وہ دستِ خُدا
کیوں تیغ چلائی دشمنِ دیں
تر خون میں ۔۔۔

زینب پہ یتیمی چھائی ہے
مسجد سے خبر یہ آئی ہے
لو قتل ہوا کعبے کا مکیں
تر خون میں ۔۔۔

عباس تڑپ کر روتے ہیں
رُخصت میرے مولا ہوتے ہیں
گر جائے فلک پھٹ کر نہ کہیں
تر خون میں ۔۔۔

ریحان بچھائو فرشِ اعزا
گھر گھر سے اُٹھے ماتم کی صدا
اس غم کی کسی کو تاب نہیں
تر خون میں ۔۔۔


tar khoon may hui haider ki jabeen
kyun rote hai jibreel-e-ameen
ya ali ya ali

ye taygh chali kiske sar par
zaqmi huye sajde may haider
kyun hilne laga hai arshe bareen
tar khoon may....

karti hai azane wawaila
masjid ka sahan hai farshe aza
haider ke lahoo se tar hai zameen
tar khoon may....

kyun rozedaar pe zulm kiya
tune bine-muljim ye to bata
shaq hogayi kyun moula ki jabeen
tar khoon may....

hasnain ke sar se saaya utha
maghmoon hui kaabe ki faza
marqad my nabi ko chain nahi
tar khoon may....

wo shahe arab wo shere khuda
wo nafse nabi wo daste khuda
kyun taygh chalayi dushmane deen
tar khoon may....

zainab pe yateemi chaayi hai
masjid se khabar ye aayi hai
lo qatl hua kaabe ka makeen
tar khoon may....

abbas tadapkar rote hai
ruksat mere moula hote hai
gir jaaye falak phat kar na kaheen
tar khoon may....

rehaan bichao farshe aza
har ghar se uthay matam ki sada
is gham ki kiski ko taab nahi
tar khoon may....
Noha - Tar Khoon May
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online