سورج نے جب سحر کا سفر کر لیا تمام
خیموں کی سمت بڑھنے لگا پھر غرورِ شام
ظلمت نے روشنی سے لیا کیسا انتقام
جلنے لگے رسول کی اولاد کے خیام
شعلہ فگانیوں کا نتیجہ عیاں ہوا
ہر عرشِ بریں کی سمت روانہ دھواں ہوا
سورج نے جب سحر۔۔۔

اُمت نبی کی لُوٹ رہی تھی نبی کا گھر
تاریخ لکھ رہی تھی یہ روداد خیر و شر
دامن تھا کربلا کا شہیدوں کے خوں سے تر
بکھرا پڑا تھا خاک پہ قرآں اِدھر اُدھر
کتنے مچل رہے تھے فضائوں کی گود میں
بچے دِہل کے چُھپ گئے مائوں کی گود میں
سورج نے جب سحر۔۔۔

ایسے میں اک رسول کی بے مثل یادگار
خیموں کی آگ جس کی غریبی سے شرمسار
عابد کی جستجو میں بہتر کی سوگوار
جاتی تھی خیمہ گاہ میں گھبرا کے بار بار
پایا جو غش میں حُجتِ پروردگار کو
زینب اُٹھا کے لائی شریعت کے بار کو
سورج نے جب سحر۔۔۔

شانہ ہلا کے سیدِ سجاد سے کہا
بیٹا اُٹھو کے سر سے میرے چھِن چُکی ردا
باجے بجا رہے ہیں اُدھر دُشمنِ خُدا
نیزے پہ آ چُکا ہے سرِ شاہِ کربلا
ڈھالے ہوئے یہ رات قیامت کا روپ ہے
اب اس کے بعد صبح و اسیری کی دھوپ ہے
سورج نے جب سحر۔۔۔

کتنا کٹھن تھا ثانیِ زہرا کا امتحاں
بھائی کا غم رسیدہ لیئے گھر کی پاسباں
خیمے تو جل چُکے تھے بسر ہوتی شب کہاں
صحرا کی خاک زیرِ قدم سر پہ آسماں
عباس کے عمل کو فریضہ بنا لیا
زینب نے اب حُسین کا پرچم اُٹھا لیا
سورج نے جب سحر۔۔۔

مقتل سے سوئے شام ہوا قافلہ رواں
اونٹوں پہ اہلیبیت تھے سجاد سا رواں
کانٹوں پہ چل رہا تھا شریعت کا پاسباں
گردن کا طوق پائوں کی زنجیر نوحہ خواں
اللہ کی رضا کو گلے سے لگائے تھا
بیمار بار عالمِ امکاں اُٹھائے تھا
سورج نے جب سحر۔۔۔


suraj ne jab sehar ka safar kar liya tamam
qaimo ki samt badhne laga phir ghuroore shaam
zulmat se roshni se liya kaisa inteqaam
jalne lagay rasool ki aulaad ke qayaam
shola figaniyo ka nateeja ayan hua
har arshe bari ki samt rawana dhuan hua
suraj ne jab sehar....

ummat nabi ki loot rahi thi nabi ka ghar
tareekh likh rahi thi ye rodaad qair o shar
daman tha karbala ka shaheedo ke khoon se tar
bikhra pada tha khaak pe quran idhar udhar
kitne machal rahe thay fizaon ki godh may
bache dehal ke chup gaye maon ki godh may
suraj ne jab sehar....

aise may ek rasool ki bemisl yaadgaar
qaimo ki aag jiski ghareebi se shamr saar
abid ki justuju may bahattar ki soghwaar
jaati thi qaimagaah may ghabrake baar baar
paaya jo ghash may hujjate parwar digaar ko
zainab uthake laayi sahrriyat ke baar ko
suraj ne jab sehar....

shana hila ke sayyede sajjad se kaha
beta utho ke sar se mere chin chuki rida
baaje baja rahe hai udhar dushmane khuda
naize pe aa chuka hai sare shahe karbala
dhaale hue ye raat qayamt ka roop hai
ab iske baad subho aseeri ki dhoop hai
suraj ne jab sehar....

kitna kathin tha saniye zehra ka imtehan
bhai ka gham raseeda liye ghar ki pasbaan
qaime to jal chuke thay basad hoti shab kahan
sehra ki khaak zere qadam sar pe aasman
abbas ke amal ko fareeza bana liya
zainab ne ab hussain ka parcham utha liya
suraj ne jab sehar....

maqtal se suye shaam hua khaafila rawan
oonton pe ahlebayt kay sajjad saarwan
kaanton pe chal raha sharriyat ka pasbaan
gardan ka tauq paon ki zanjeer nauhakhan
allah ki raza ko galay se lagaye tha
bemaar baar aalame imkaan uthaye tha
suraj ne jab sehar....
Noha - Suraj Ne Jab

Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online