صُغریٰ نے لکھا خط میں کہ زہرا کے دل و جاں
آداب بجا لاتی ہے بیٹی شاہِ ذیشاں

اماں کی جُدائی نے میرا چین ہے لُوٹا
حضرت کی جُدائی ہے میرے قتل کا ساماں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

میں کون تمہاری ہوں جیئوں یا کہ مروں میں
اے بھولنے والو میرا کوئی نہیں پُرساں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

بھیا علی اکبر تو مجھے بھول ہی بیٹھے
کیا آپ بھی بیٹی کو بُھلا بیٹھے چچا جاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

آنا ہو تو آ جائو ابھی جان ہے باقی
صورت کو ترستے ہیں میرے دیدئہ حیراں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

فرمائیے اکبر سے میری سمت سے بابا
بھیا یہ بہن آپ کی کچھ دن کی ہے مہماں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

حسرت ہے کہ اکبر کی بلا لے کہ مروں میں
ہنگامِ نزع آپ کا ہاتھوں میں ہو دامن
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

ہاتھوں پہ چچا جان کہ ہو میرا جنازہ
کاندھا میرے تعبوت کو دے اکبرِ ذیشاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

افسوس کہ تب پہنچا مگر قاصدِ صُغریٰ
جب لُٹ چُکا تھا قافلہِ سرورِ ذیشاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

سینے پہ سِناں کھائے پڑے تھے علی اکبر
ہاتھوں کو کٹائے تھا پڑا بازوئے سلطاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

اک تیر سے پہلو علی اصغر کے لگا تھا
تُربت پہ بُکا کرتے تھے بیٹھے شاہِ ذیشاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

خط پڑھ کہ جگر پھٹ گیا فرزندِ نبی کا
قاصد سے کہا عیاں ہے میرے قتل کا ساماں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

عباس و علی اکبر و قاسم گئے مارے
تیروں کا ستم جھیل گیا اصغرِ ناداں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

میں تین شب و روز کا پیاسا ہی مروں گا
پانی پہ میرا فاتحہ دلوانا میری جاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔

اب ساتھ تمہارے ہیں دُعائیں میری صُغریٰ
اب تیرا خُدا حافظ و ناصر ہو میری جاں
صُغریٰ نے لکھا خط ۔۔۔۔۔


sughra ne likha khat may ke zehra ke dil o jaan
aadaab baja laati hai beti shahe zeeshan

amma ki judaai ne mera chain hai loota
hazrat ki judaai hai mere qatl ka samaan
sughra ne likha khat....

mai kaun tumhari hoo jiyun ya ke maroon mai
ay bhoolne walon mera koi nahi pursa
sughra ne likha khat....

bhaiya ali akbar to mujhe bhool hi baithe
kya aap bhi beti ko bhula baithe chacha jaan
sughra ne likha khat....

aana ho to aajao abhi jaan hai baakhi
surat ko taraste hai mere deedaye hairaan
sughra ne likha khat....

farmaiye akbar se meri simt se baba
bhaiya ye behan aap ki kuch din ki hai mehman
sughra ne likha khat....

hasrat hai ke akbar ki bala leke maroon mai
hangame nazha aap ka haathon may ho daaman
sughra ne likha khat....

hathon pe chacha jaan ke ho mera janaza
kaandha mere taboot ko day akbar e zeeshan
sughra ne likha khat....

afsos ke tab pahuncha magar qasid e sughra
jab lut chuka tha khafilaye sarwar e zeeshan
sughra ne likha khat....

seene pe sina khaye paday thay ali akbar
hathon ko kataye tha pada baazu e sultan
sughra ne likha khat....

ek teer se pehlu ali asghar ke laga tha
turbat pe buka karte thay baithe shah e zeeshan
sughra ne likha khat....

khat padke jigar phat gaya farzande nabi ka
qasid se kaha ayan hai mere qatl ka samaan
sughra ne likha khat....

abbas o ali akbar o qasim gaye maare
teeron ka sitam jhel gaya asghar e nadan
sughra ne likha khat....

mai teen shab o roz ka pyasa hi marunga
pani pe mera fateha dilwana meri jaan
sughra ne likha khat....

ab saath tumhare hai duaye meri sughra
ab tera khuda hafiz o nasir ho meri jaan
sughra ne likha khat....
Noha - Sughra Ne Likha

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online