صغریٰ نے خط لکھا ہے کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔

اب تو دیا جلانے کی طاقت نہیں رہی
یوں سمجھو اب تو جینے کی حسرت نہیں رہی
پردیس سے پلٹ کر کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔

قبرِ نبی پہ جا کرمنت ہے میں نے مانی
کنبے پہ میرے یا رب ہوے نہ بند پانی
در پہ کھڑی ہے خواہر کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔
__________________________________________

سوچا تھا بہن بھائی کے مندی لگائے گی
شادی پہ اپنے بھائی کی خوشیاں منائے گی
کیا خبر تھی پامال ہو گی بھائی تیری لاش
بہن تیرے جنازے پہ آ بھی نہیں پائے گی
__________________________________________

شادی اگر رچانا کرب و بلا میں جا کے
حق میرا مجھ کو دینا بھیا وطن میں آکے
دولہن کو اپنی لے کر کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔

بھیا بہن کا میری دیکھو خیال رکھنا
جب مجھ کو یاد کر کے روئے میری سکینہ
لے کر اُسے میرے گھر کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔
_________________________________________

صغریٰ نے انتظار کے صدمے اُٹھائے ہیں
بھائی تو پھر بھی لوٹ کے واپس نہ آئے ہیں
تنہائی تنہائی گھر کی قلب کا بازار بن گئی
آنسو بہن نے قبرِ نبی پر بہائے ہیں
__________________________________________

چھ ماہ کے ہو گئے ہیں خط بھی نہ تم نے لکھا
کس حال میں ہے صغریٰ یہ بھی نہ تم نے پُوچھا
کہتا ہے قلبِ مُضطر کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔

ریحان ایک دن یہ کیسی خبر تھی آئی
ہم شکلِ مصطفی نے سینے پہ برچھی کھائی
آیا ہے پھر لبوں پر کب آئو گے اکبر
جان آ گئی لبوں پر کب آئو گے اکبر
صغریٰ نے خط لکھا ہے۔۔۔


sughra ne khat likha hai kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....

ab to diya jalaane ki taakhat nahi rahi
yun samjho ab to jeene ki hasrat nahi rahi
pardes se palat kar kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....

khabar-e-nabi pe jaa kar mannat hai maine maangi
kunbay pe mere ya-rab howay na band pani
dar pay khadi hai khwahar kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....
__________________________________________

socha tha behan bhai ke mehndi lagayegi
shaadi pe apne bhai ki khushiya manayegi
kya khabar thi pamaal hogi bhai teri laash
behan tere janaze pe aa bhi na paayegi
__________________________________________

shahdi agar rachana karbobala may jaake
khat mera mujhko dena bhaiya watan may aake
dulhan ko apni lekar kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....


bhaiya behan ka meri dekho khayaal rakhna
jab mujhko yaad karke roye meri sakina
lekar usay mere ghar kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....
__________________________________________

sughra ne intezar ke sadme uthaaye hai
bhai to phir bhi lautke wapas na aaye hai
tanhai tanhai ghar ki qalb ka bazaar bangayi
aansu behan ne khabar-e-nabi par bahaye hai
__________________________________________

cheh maah ke hogaye hai khat bhi na tumne likha
kis haal may hai sughra ye bhi na tumne poocha
kehta hai qalb-e-mustar  kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....

rehaan ek din yeh kaisi khabar thi aayi
humshakl-e-mustafa ne seenay pe barchi khaayi
aaya hai phir labon par  kab aaoge akbar
jaan aagayi labon par kab aaoge akbar
sughra ne khat likha hai....
Noha - Sughra Ne Khat Likha
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online