صُغریٰ نے کہا ہائے برادر نہیں آئے اکبر نہیں آئے
بیمار بہن اُن کو کہاں ڈھونڈنے جائے اکبر نہیں آئے

کیا جانیئے کس بات پہ وہ مجھ سے خفا ہے ،نظروں سے یہ نیہاں ہے
یوں گھر سے گئے لوٹ کہ پھر گھر نہیں آئے،اکبر نہیں آئے
صُغریٰ نے کہا ۔۔۔۔۔

دم آنکھوں میں اٹکا ہے نظر در پہ گڑھی ہے،مرنے کی گھڑی ہے
کیا جانیئے اب قبر میری کون بنائے،اکبر نہیں آئے
صُغریٰ نے کہا ۔۔۔۔۔

جس راہ سے آنے کی خبر دے کے گئے تھے،سو وعدے کئے تھے
بیٹھی ہوں اُسی راہ پہ میں آس لگائے،اکبر نہیں آئے
صُغریٰ نے کہا ۔۔۔۔۔

بھائی جو نہیں پاس تو پھر کون ہے میرا،ہر سو ہے اندھیرا
ہے کون میری قبر پہ جو شمع جلائے،اکبر نہیں آئے
صُغریٰ نے کہا ۔۔۔۔۔


sughra ne kaha haye baradar nahi aaye akbar nahi aaye
bemaar behan unko kahan dhoondne jaye akbar nahi aaye

kya janiye kis baat pe wo mujhse khafa hai, nazron se ye niha hai
yun ghar se gaye laut ke phir ghar nahi aaye, akbar nahi aaye
sughra ne kaha....

dum aankhon may atka hai nazar dar pe gadi hai, marne ki ghadi hai
kya janiye ab qabr meri kaun banaye, akbar nahi aaye
sughra ne kaha....

jis raah se aane ki khabar deke gaye thay, sau waade kiye thay
baithi hoo usi raah pe mai aas lagaye, akbar nahi aaye
sughra ne kaha....

bhai jo nahi paas to phir kaun hai mera, har soo hai andhera
hai kaun meri qabr pe jo shamma jalaye,  akbar nahi aaye
sughra ne kaha....
Noha - Sughra Ne Kaha Haye

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online