صغرا میں لٹ کر آئی ہوں
کرب و بلا کی داستان
کیسے سنے گی ناتواں
بس یہ سمجھ لے نیم جاں

دو تھے میرے شمس و قمر
ایسے گئے آئے نہ گھر
دونوں گئے سوئے جناں
صغرا میں لٹ کر

میری کمائی لٹ گئی
تصویر احمد مٹ گئی
مارا گیا کڑیل جواں
صغرا میں لٹ کر

سر کاٹ کر شبیر کا
نیزے پہ لائے اشقیائ
کیسے ہو وہ منظر بیاں
صغرا میں لٹ کر

میں تھی بھرا دربار تھا
وہ شام کا بازار تھا
بے پردہ تھیں سب بیبیاں
صغرا میں لٹ کر

کیونکر ثریا ہو بیاں
لرزے میں تھا کون و مکاں
زینب جو کرتی تھیں بیاں
صغرا میں لٹ کر


sughra mai lut kar aayi hoon
karbobala ki daastaan
kaise sunegi natawan
bas ye samajh le neemjaan

do thay mere shamso qamar
aise gaye aaye na ghar
dono gaye suye jina
sughra mai....

meri kamayi lut gayi
tasveer e ahmed mit gayi
maara gaya karyal jawaan
sughra mai....

sar kaat kar shabbir ka
naize pa laaye ashkhiya
kaise ho wo manzar bayaan
sughra mai....

mai thi baradar baar tha
wo shaam ka bazaar tha
beparda thi sab bibiyan
sughra mai....

kyun kar suraiya ho bayaan
larze may tha kauno makaan
zainab jo karti thi bayaan
sughra mai....
Noha - Sughra Mai Lutkar
Shayar: Suraiya
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online