اماں کی نگاہوں سے میرا زخم چھُپانا
بابا میرے سینے میں سِناں ٹوٹ گئی ہے

اس طرح کلیجے میں اُتر آئی ہے برچھی
سینہ نہیں ارمان بھی ماں کے ہوئے زخمی
چاہا تھا میری ماں نے مجھے دولہا بنانا
بابا میرے سینے ۔۔۔۔۔

جی چاہتا ہے آپ کی تسلیم کو اُٹھوں
رُتبے کا تقاضا ہے کے تعظیم کو اُٹھوں
مشکل ہے مگر ہاتھ کلیجے سے ہٹانا
بابا میرے سینے ۔۔۔۔۔

میں جانتا ہوں ضد وہ بہت تم سے کرے گی
تنہا تمہیں زینب کبھی آنے نہیں دے گی
مقتل میں میری پالنے والی کو نہ لانا
بابا میرے سینے ۔۔۔۔۔

یہ سوچ کے اکبر کا پھٹا جاتا ہے سینہ
آواز نہ سُن لے کہیں معصوم سکینہ
سجاد کو آہستہ ذرا جا کے بتانا
بابا میرے سینے ۔۔۔۔۔

اللہ کرے لوٹ کے تم جائو وطن کو
مجبوریاںبھائی کی بتا دینا بہن کو
تم میری طرف سے اُسے سینے سے لگانا
بابا میرے سینے ۔۔۔۔۔

قاتل نے سِناں توڑی تکلم یہی کہہ کر
سُنتا ہے کے صابر ہے بہت سبطِ پیعمبر
اکبر نے کہا صبر کی معراج دیکھانا
کے بابا میرے سینے ۔۔۔۔۔


amma ki nigaho se mera zakm chupana
baba mere seene may sina toot gayi hai

is tarha kaleje may utar aayi hai barchi
seena nahi armaan bhi maa ke hue zakhmi
chaha tha meri maa ne mujhe duklha banana
baba mere seene....

jee chahta hai aap ki tasleem ko uthun
rutbe ka takhaza hai ke tazeem ko uthun
mushkil hai magar haath kaleje se hatana
baba mere seene....

mai jaanta hoo zid wo bahot tumse karegi
tanha tumhe zainab kabhi aane nahi degi
maqtal may meri paalne wali ko na laane
baba mere seene....

ye soch ke akbar ka phata jata hai seena
awaaz na sunle kahin masoom sakina
sajjad ko aahista zara jaake batana
ke baba mere seene....

allah kare laut ke tum jao watan ko
majbooriyan bhai ki batadena bahan ko
tum meri taraf se usay seene se lagana
ke baba mere seene....

qaatil ne sina todi takallum yehi kehkar
sunta hai ke saabir hai bahot sibte paymabar
akbar ne kaha sabr ki meraj dikhana
ke baba mere seene....
Noha - Sina Toot Gayi Hai
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online