شہہ تھام کے لائے ہیں کمر مشکِ سکینہ
پانی سے نہیں خون سے ہے تر مشکِ سکینہ

صدیوں سے تُو غازی کے علم سے جو بندھی ہے
باقی ہے ابھی کتنا سفر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔

سینے میں تیرے پیاس بہتر کی ہے پھر بھی
پانی نہ ہوا تیرا جگر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔

آئے گا نہ اب لوٹ کے دریا سے علمدار
لائی ہے یہ دریا سے خبر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔

ہر زخم سے بہتا رہا پانی کی طرح خون
لپٹی رہی سینے سے مگر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔

شرمندہ سکینہ سے ہے سقائے سکینہ
شرمندہ ہے غازی سے مگر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔

غازی کے دہن کی طرح یہ خشک دہن ہے
کوثر سے لبا لب ہے مگر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔

پیاسا ہے نوید اک زمانے سے ہے پیاسا
ہو اُس کی طرف اک نظر مشکِ سکینہ
شہہ تھام کے لائے ۔۔۔۔۔


sheh thaam ke laaye hai kamar mashke sakina
pani se nahi khoon se hai tar mashke sakina

sadiyon se tu ghazi ke alam se jo bandhi hai
baakhi hai abhi kitna safar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....

seene may tere pyas bahattar ki hai phir bhi
pani na hua tera jigar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....

aayega na ab laut ke darya se alamdar
laayi hai ye darya se khabar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....

har zakhm se behta raha pani ki tarha khoon
lipti rahi seene se magar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....

sharminda sakina se hai saqqa e sakina
sharminda hai ghazi se magar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....

ghazi ke dahan ki tarha ye khusk dahan hai
kausar se laba lab hai magar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....

pyasa hai naved ek zamane se hai pyasa
ho uski taraf ek nazar mashke sakina
sheh thaam ke laaye....
Noha - Sheh Thaam Ke Laaye
Shayar: Naved
Nohaqan: Sajid Hussain Jafri
Download Mp3
Listen Online