شہہ نے زینب سے کہا مقتل میں تم آنا نہیں
اے بہن خنجر تلے بھائی کو تڑپانا نہیں

چھُپ گئے تھے اس طرح تیروں میں سرتا پا حسین
آئے خیمے میں تو گھر والوں نے پہچانا نہیں
شہہ نے زینب سے ۔۔۔۔۔

دیکھتے کب تک ملتا ہے لاشِ سرور کو کفن
وادیئے غربت میں کوئی اپنا بے گانہ نہیں
شہہ نے زینب سے ۔۔۔۔۔

شہہ کو سینے سے لگا کر خلد میں بولے رسول
کیا میری اُمت نے بیٹا تجھے پہچانا نہیں
شہہ نے زینب سے ۔۔۔۔۔

قبر میں منہ چوم کر بے شیر کا بولے حسین
ہم بھی آتے ہیں ابھی اے لال گھبرانا نہیں
شہہ نے زینب سے ۔۔۔۔۔

کیسے جس بے کس کے ماتم دار کل ہوتے تھے خار
آج اُن کا کس جگہ دیکھو عزاخانہ نہیں
شہہ نے زینب سے ۔۔۔۔۔


sheh ne zainab se kaha maqtal may tum aana nahi
ay behan khanjar talay bhai ko tadpana nahi

chup gaye thay is tarha teeron may sartapa hussain
aaye qaime may to ghar walon ne pehchana nahi
sheh ne zainab se....

dekhte milta hai kab tak laashe sarwar ko kafan
waadiye ghurbat may koi apna begana nahi
sheh ne zainab se....

sheh ko seene se lagakar khuld may bolay rasool
kya meri ummat ne beta tujhe pehchana nahi
sheh ne zainab se....

qabr may moo choom kar baysheer ka bolay hussain
hum bhi aate hai abhi ay laal ghabrana nahi
sheh ne zainab se....

qais jis bekas ke matamdar kal hote thay khaar
aaj unka kis jagah dekho azakhana nahi
sheh ne zainab se....
Noha - Sheh Ne Zainab Se
Shayar: Allama Qais Zangipuri
Nohaqan: Syed Rashid Abbas
Download Mp3
Listen Online