شامیوں میں گھِر گیا ہے مہمانِ کربلا

کلمئہ توحید کا عرفاں بیانِ کربلا
امتیازِ حق و باطل داستانِ کربلا
پیشوائے اہلِ ایماں کُشتگانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

تین دن سے بندھ ہے پانی نبی کی آل پر
کون ہے جو ترس کھائے بے کسوں کے حال پر
خوب مہمانی ادا کی میزبانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

یوسفِ کرب و بلا ہمشکلِ محبوبِ خدا
دینِ حق پر کر دیا اپنی جوانی گو فدا
کھا کے سینے پر سِناں وہ نوجوانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

کانپ اُٹھا عرشِ معلیٰ ہل گئے قلبِ عدو
سینہِ شبیر میں دل ہو گیا غم سے لہو
تیر کھا کر ہنس دیا جب بے زبانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

پھیر دی حلقِ شاہِ دیں پر ستمگار نے چھُری
پیٹتی سر آگئی میدان میں بنتِ علی
تم بھی پیٹو اپنے سر کو عاشقانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

کس طرح جھُک جائے گا وہ زورِ باطل سے بھلا
بازوئے عباس کا جس کو سہارا مل گیا
حشر تک اُونچا رہے گا اب نشانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

جل گئے خیمے چھِنی چادر بندھے رسی میں ہاتھ
اب نہیں کوئی حرم کے سر پہ جُز آبِ کزاق
شام جاتا ہے لُٹ کر کاروانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

عصر کا ہنگام اور وہ شاہِ دیں کی کارزار
تھا قیامت کا سماں جب چھا رہی تھی ذوالفقار
خون میں تر تھے زمین و آسمانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔

اللہ اللہ صبحِ عاشورہ وہ اکبر کی صدا
چھوڑ کر باطل کا دامن جانبِ حق حُر چلا
گونجی جب مومن فضائوں میں اذانِ کربلا
شامیوں میں گھر گیا ۔۔۔


shamiyon may ghir gaya hai mehmane karbala

kalmaye tauheed ka irfan bayane karbala
imteyaz e haq o baatil daastane karbala
payshwaye ahle emaan kushtagane karbala
shamiyon may ghir gaya....

teen din se bandh hai pani nabi ki aal par
kaun hai jo tars khaye bekason ke haal par
khoob mehmani ada ki mezbane karbala
shamiyon may ghir gaya....

yusufe karbobala hamshakle mehboobe khuda
deen e haq par kar diya apni jawani gu fida
khake seene par sina wo naujawane karbala
shamiyon may ghir gaya....

kaamp utha arsh e moalla hil gaye qalbe adoo
seena e shabbir may dil hogaya gham se lahoo
teer khakar has diya jab bezubane karbala
shamiyon may ghir gaya....

phayr di halqe shahe deen par sitamgar ne churi
peet-ti sar aagayi maidan may binte ali
tum bhi peeto apne sar ko ashiqan e karbala
shamiyon may ghir gaya....

kis tarha jhuk jayega wo zor e baatil se bhala
baazu e abbas ka jisko sahara mil gaya
hashr tak ooncha rahega ab nashane karbala
shamiyon may ghir gaya....

jal gaye qaimay chini chadar bandhe rassi may haath
ab nahi koi haram ke sar pe juz aabe kizakh
shaam jaata hai lutkar kaarwane karbala
shamiyon may ghir gaya....

asr ka hamgam aur wo shaahe deen ki kaarzaar
tha wayamat ka saman jab cha rahi thi zulfiqar
khoon may tar thay zameen o aasman e karbala
shamiyon may ghir gaya....

allah allah subhe ashoora wo akbar ki sada
chor kar baatil ka daman jaanibe haq hurr chala
goonji jab momin fizaon may azan e karbala
shamiyon may ghir gaya....
Noha - Shamiyo May Ghir Gaya

Nohaqan: Anjuman e Masoomeen
Download Mp3
Listen Online