شامِ غریباں آگئی بے کسی چھا گئی
شام کی فوج خیموں تلک آگئی
آتشِ ظلم خیمے جلانے لگی
میرے خدا لبِ فرات سائبان جل گیا
جلے خیام سیدہ کا پھر مکان جل گیا
شامِ غر یباں میں حرم کرتے تھے فریاد
ہائے ہائے ہائے ہائے
ہائے علمدار
شامِ غریباں میں ۔۔۔

چادریں چھِن گئیں لُٹ گیا مال و زر
خیمہ در خیمہ ہے بیبیوں کا سفر
بیٹیاں فاطمہ کی ہوئی نوحہ گر
تڑپ تڑپ کے یا علی پُکارتی تھی بیبیاں
اِدھر اُدھر بس اپنے لال ڈھونڈتی تھی بیبیاں
جلنے لگا ہائے اُدھر بسترِ بیمار
ہائے ہائے ہائے ہائے
ہائے علمدار
شامِ غریباں میں ۔۔۔

کیا کرے زینبِ خستہ دل کیا کرے
نہ رہے وارثانِ حرم نہ رہے
رات آئی نہیں اور سب سو گئے
دھواں دھواں فضا لہو لہوہے دشتِ کربلا
کسی نشیب سے ہے مستقل صدائے فاطمہ
نالئہ یا فاطمہ یا حیدرِکرار
ہائے ہائے ہائے ہائے
ہائے علمدار
شامِ غریباں میں ۔۔۔

خاک پر آگئیں بیبیاں نوحہ گر
گود میں پیاسے بچوں کے رکھے ہیں سر
کس کو آواز دے ہائے جائے کدھر
نہ کوئی بھائی ہے نہ بھائی کا پسر نہ بھانجا
علی کی لاڈلی نے بھائی کا علم اُٹھا لیا
میرِ صدر میرِ حرم زینبِ لاچار
ہائے ہائے ہائے ہائے
ہائے علمدار
شامِ غریباں میں ۔۔۔

ہائے ریحان و سرور سرِ کربلا
ہو کے بے دست اک لاشہِ باوفا
دیکھتا رہ گیا قافلہ چل دیا
سلام بے کفن بدن وہ جن کے سر ہوئے جُدا
سلام دُخترانِ فاطمہ اسیر و بے ردا
اک رسن بارہ گلے کوچہ و بازار
ہائے ہائے ہائے ہائے
ہائے علمدار
شامِ غریباں میں ۔۔۔


sham e gham aagayi bekasi cha gayi
sham ki fauj qaimo talak aagayi
aatishe zulmo qaime jalaane lagi
mere khuda labe furaat sayeban jal gaya
jalay qayaam sayyeda ka phir makaan jal gaya
sham e gariban may haram karte thay faryaad
haye haye haye haye
haye alamadar
sham e gariban may....

chadare chin gayi lut gaya maal o zar
qaima dar qaima hai bibiyo ka safar
betiyan fatema ki huwi nauhagar
tadap tadap ke ya ali pukarti thi bibiyan
idhar udhar bas apne laal dhoondti thi bibiyan
jalne laga haye udhar bistare bemaar
haye haye haye haye
haye alamadar
sham e gariban may....

kya karay zainab e khasta dil kya karay
na rahe waarisane haram na rahay
raat aayi nahi aur sab sogaye
dhuwan dhuwan fiza lahoo lahoo hai dashte karbala
kisi nasheb se hai mustaqil sada e fatema
naala e ya fatema ya hydare karrar
haye haye haye haye
haye alamadar
sham e gariban may....

khaak par aagayi bibiyan nauhagar
godh may pyase bacho ke rakhe hai sar
kisko awaaz de haye jaaye kidhar
na koi bhai hai na bhai ka pisar na bhaanja
ali ki laadli ne bhai ka alam utha liya
mir e sadar mir e haram zainabe laachar
haye haye haye haye
haye alamadar
sham e gariban may....

haye rehaan o sarwar sare karbala
hoke be-dast ek lashaye bawafa
dekhta rehgaya khaafila chaldiya
salaam bekafan badan wo jinke sar huve juda
salam dukhtarane fatema aseero berida
ek rasan baara galay koocha o baazar
haye haye haye haye
haye alamadar
sham e gariban may....
Noha - Shame Ghariban May
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online