شام والوں نہ نہ ستائو
کہتاتھا مہاری،غربت پہ ہماری،بس کر نہ رلائو

سر چچا کا میرے اس واسطے گرجاتا ہے
انکوبہنوں کا کھلا سر جو نظر آتا ہے
غیور کے سر کو للہ نہ لوگوں نیزے پہ اُٹھائو
شام والوں ۔۔۔۔

کیا نہ ستم ڈھائے ہیں ہم پر تم نےہائے کیا  
حد یہ ہے چھین لی تطہیرکی چادر تم نے
اب تم وہی چادر نیزے پہ اُٹھاکر ہم کو نہ دکھائو
شام والوں ۔۔۔۔

ہم اُلِل امر ہیں شاید یہ نہیں تم کو خبر
ہم اگر چاہیں تو برسیںابھی تم پر پتھر
مجبور سمجھ کر ہائے تم آلِ نبی پر پتھر نہ گرائو
شام والوں ۔۔۔۔

کیسے نیزے پہ اُٹھایا گیا سر اصغر کا
کیسے پامال کیا ابنِ حسن کا لاشہ
یہ ظلم کے قصے مت سامنے جاکے مائوں کو سنائو
شام والوں ۔۔۔۔

شامِ عاشور سے یہ سوئی نہیں ہے اب تک
میں تو رویاہوں یہ روئی بھی نہیں ہے اب تک
تم مارلو مجھ کو ہائے پر میری پھپی کو درے نہ لگائو
شام والوں ۔۔۔۔

راستے بھر یہ ٹرپتے رہے پانی کے لئے
تم کو معلوم نہیںکب سے ہیں پیاسے بچے
بچوں کو دیکھاکر اس طرح زمیں پر پانی نہ بہائو
شام والوں ۔۔۔۔

آج بٹتی ہے وہاں نام پہ زینب کے ردا
کل تکلم وہاں بیمار میرا کہتا رہا
یہ آلِ نبی ہیں ہائے تم ایسے نہ ان کو بے پردہ پھرائو
شام والوں ۔۔۔۔


shaam walo na satao
kehta tha muhari, ghurbat pe hamari, bas kar na rulao

sar chacha ka mere is waaste gir jaata hai
inko behno ka khula sar jo nazar aata hai
ghayoor ke sar ko lillaah na logo naize pe uthao
shaam walo....

haaye kya kya na sitam dhaaye hai ham par tumne
hadd yeh hai cheenli tatheer ki chadar tumne
ab tum wahi chadar naize pe uthakar humko na dikhao
shaam walo....

hum ulil-amr hai shayad yeh nahi tumko khabar
hum agar chaahe to barse abhi tum par patthar
majboor samajhkar haaye tum aale nabi par pathar na girao
shaam walo....

kaise naize pe uthaaya gaya sar asghar ka
kaise paamal kiya ibne-hassan ka laasha
yeh zulm ke kisse mat saamne jaake maon ko sunao
shaam walo....

shaam-e-ashoor se ye soyi nahi hai ab tak
mai to roya hoon ye royi bhi nahi hai ab tak
tum maarlo mujhko haaye par meri phuphi ko durre na lagao
shaam walo....

raaste bhar yeh tarapte rahe pani ke liye
tumko maloom nahi kabse hai pyase bache
bacho ko dikhakar is tarha zameen par pani na bahao
shaam walo....

aaj bat-ti hai wahan naam pe zainab ke rida
kal takallum wahan bemaar mera kehta raha
ye aale nabi hai haye tum aise na inko beparda phirao
shaam walo....
Noha - Sham Walo Na Satao

Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online