شام کی عورتوں ایک وعدہ کرو،روز قبرِ سکینہ پہ آئو گی تم
جب تلک لوٹ کر میں نہ آئوں،آ کے شمع جلائو گی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔

صورتِ شاہِ دیں بے کفن بھی،میرے جیسی اسیر، محن بھی
خالی کُرتے میں مدفونِ غُربت،مثلِ اصغر رہی بے کفن بھی
کیا کفن کی طرح روز چادر،اس لحد پر چڑھائو گی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔

ایک یثرب کی تھی شاہ ذادی ، اُس کا سقہ تھا عباسِ غازی
مشق لیکر گیا سوئے دریا، اور قبضے میں کرلی ترائی
لوریوں میں یہ سچی کہانی ، روز اس کو سنائو گی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔

ہم نے زنداں سے پائی رہائی ، اب بہن پاس ہوگی نہ بھائی
بات اتنی سی بس یاد رکھنا، میری بچی ہے غم کی ستائی
تم نے بازار مین تو ستایا ،اب نہ اس کو ستائو گی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔

جب کبھی قید خانے میں آنا ، بے ردا بیبیوں کو نہ لانا
تم کو اصغر بھی دے گا دُعائیں ،اس کی تنہائیاں یوں مٹانا
چھوٹے چھوٹے سے بچوں کو لیکر،پاس اس کے سلائو گی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔

قبرِ بے کس پہ آنسو بہانے ،حال قیدِ ستم کا سُنانے
قافلہ کربلا کو چلا ہے ،اس کے بابا کا چہلم منانے
اتنا کہدو ہماری طرف سے ، اس کا چہلم منائوگی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔

شامیوں کی بہو بیٹیوں سے ،کہہ رہی تھی وہ اکبر یہ رو کے
یہ امانت ہے پردیسیوں کی ، کررہی ہوں تمہارے حوالے
مجھ سے اک بار بس اتنا کہدو، اپنا وعدہ نبھائو گی تم
شام کی عورتو ںایک۔۔۔


shaam ki aurton ek wada karo, roz qabre sakina pe aaogi tum

jab talak laut kar mai na aaun aake shamma jalaogi tum
shaam ki aurton ek....

surate shaahe deen bekafan bhi, mere jaisi aseer e mehen bhi
khaali kurte may madhfoon e ghurbat, misle asghar rahi bekafan bhi
kya kafan ki tarah roz chadar, is lehad par chadhaogi tum
shaam ki aurton ek....

ek yasrab ki thi shaahzadi, uska saqqa tha abbas e ghazi
mashq lekar gaya suye darya, aur khabze mai karli taraayi
loriyon may yeh sachi kahani, roz isko sunaogi tum
shaam ki aurton ek....

humne zindan se paayi rehaai, ab behen paas hogi na bhai
baat itni si bas yaad rakhna, meri bachi hai gham ki satayi
tumne bazaar may to sataya, ab na isko sataogi tum
shaam ki aurton ek....

jab kabhi qaid khane may aana, berida bibiyon ko na laana
tumko asghar bhi dega duayein, iski tanhaiyan yun mitaana
chhote chhote se bacho ko laakar, paas iske sulaogi tum
shaam ki aurton ek....

qabre bekas pe aansoo bahane, haal qaide sitam ka sunane
khafila karbala ko chala hai, iske baba ka chehlum manane
itna kehdo hamari taraf se, iska chehlum manaogi tum
shaam ki aurton ek....

shamiyon ki bahu betiyon se, keh rahi thi wo akbar ye roke
ye amanat hai pardesiyo ki, kar rahi hoo tumhare hawalay
mujhse ek baar bas itna kehdo, apna waada nibhaaogi tum
shaam ki aurton ek....
Noha - Sham Ki Aurton Ek
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online