جب گردنِ شبیر پہ پھیرا گیا خنجر
پردیس میں لُوٹا گیا زہرا کا بھرا گھر
قاسم ہے نہ اکبر ہے نہ عباسِ دلاور
کنبے کی نگہباں ہے اب زینبِ مضطر
آئی شامِ غریباں زینب ہوئی تنہا

لاشہ تڑپ رہا تھا کسی کا لبِ فرات
چھینی تھی شمر نے سرِ زینب سے جب ردا
آئی شامِ ۔۔۔۔۔

بچے کو اپنے ڈھونڈتی ہے ماں اندھیرے میں
ہاتھوں پہ ہیں لائے ہوئے جھولا جلا ہوا
آئی شامِ ۔۔۔۔۔

دولہے کا لاشہ گھوڑوں سے پامال ہو گیا
یہ کیسا وقت حضرتِ کبریٰ پہ آگیا
آئی شامِ ۔۔۔۔۔

عمّوں بچائیے مجھے شمرِ لعیں سے
اک بچی دشت میں یہی دیتی رہی صدا
آئی شامِ ۔۔۔۔۔

بکھرائے اپنے بالوں کو روتی تھی فاطمہ
جس دم تھا حلقِ شاہ پہ خنجر لعین کا
آئی شامِ ۔۔۔۔۔

خیموں کی راکھ بکھری پڑی تھی زمین پر
بیٹھا تھا سر جھُکائے اسیروں کا قافلہ
آئی شامِ ۔۔۔۔۔

احمد بیان کرتا ہے کربلا کے واقعات
محسن جگر کو تھام کے پڑھتا ہے مرثیہ
آئی شامِ ۔۔۔۔۔


jab gardane shabbir pe phera gaya khanjar
pardes may loota gaya zahra ka bhara ghar
qasim hai na akbar hai na abbas-e-dilawar
kunbe ki nigehbaan hai ab zainab-e-muztar
aayi shame ghariban zainab huyi tanha

laasha tadap raha tha kisi ka labe furaat
cheeni thi shimr ne sare zainab se jab rida
aayi shame.......

bache ko apne dhoondti hai maa andhere may
haathon pe hai liye huye jhoola jala hua
aayi shame.......

dulhe ka laasha ghodon se pamaal hogaya
ye kaisa waqt hazrate kubra pe aagaya
aayi shame.......

ammu bachaiye mujhe shimre layeen se
ek bachi dasht may yahi deti rahi sada
aayi shame.......

bikhraye apne baalon ko roti thi fatima
jis dum tha halqe shah pe khanjar layeen ka
aayi shame.......

qaimon ki raakh bikhri padi thi zameen par
baitha tha sar jhukaye aseeron ka khaafila
aayi shame.......

ahmed bayaan karta hai karbal ke waaqiyaat
mohsin jigar ko thaam ke padta hai marsiya
aayi shame.......
Noha - Sham e Ghariban
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online