Noha - Sham Aa Raha Hai
Shayar: Saqlain Akbar
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online


سادات بے ردا ہیں عابد کا سر جھکا ہے
شام آرہا ہے
سارا لہو بدن کا آنکھوں میں آگیا ہے
شام آرہا ہے

بھائی کا سر جہاں تھا بی بی وہاں پہ آئی
بولی یہ سر جھکا کے کرنا دعائیں بھائی
زینب کی کربلا کا آغاز ہو رہا ہے
شام آرہا ہے

امّت کھڑی ہوئی ہے جھولی میں لے کے پتھر
زنجیر که رہی ہے چلنا سنبھل سنبھل کر
اہل حرم کا مقتل کچھ دور رہ گیا ہے
شام آرہا ہے

نیزے پہ سر جواں کا دیکھا تو ماں یہ بولی
اکبر یہ التجا ہے تجھ سے غریب ماں کی
چادر کہیں سے لا دے زینب کا سر کھلا ہے
شام آرہا ہے

اعلان ہو رہا ہے جلدی بلایا جائے
زہرا کی بیٹیوں کو پیدل چلایا جائے
کوفے کی منزلوں سے یہ سخت مرحلہ ہے
شام آرہا ہے

زینب نے جب یہ پوچھا یہ کونسی ہے بستی
سجاد میرے دل پر لگتی ہے غم کی برچھی
ہاۓ دبی زبان سے بیمار نے کہا ہے
شام آرہا ہے

یہ فضل سے رقیہ کہتی ہے اے بھتیجے
زینب کی میں ہوں ضامن باقر تیرے حوالے
دونوں نے کام اپنا تقسیم کر لیا ہے
شام آرہا ہے

زینب کے گرد بہنیں پردہ بنا رہی ہیں
خود بے ردا ہیں لیکن اسکو چھپا رہی ہیں
اکبر ستم گروں نے اعلان کر دیا ہے
شام آرہا ہے


saadaat be-rida hai abid ka sar jhuka hai
sham aa raha hai
saara lahoo badan ka aankhon may aagaya hai
sham aa raha hai

bhai ka sar jahan tha bibi wahan pe aayi
boli ye sar jhuka ke karna duayein bhai
zainab ki karbala ka aaghaz ho raha hai
sham aa raha hai....

ummat khadi hui hai jholi may le ke pathar
zanjeer keh rahi hai chalna sambhal sambhal kar
ehle haram ka maqtal kuch duur reh gaya hai
sham aa raha hai....

naize pe sar jawan ka dekha to maa ye boli
akbar ye iltija hai tujse ghareeb maa ki
chadar kaheen se la de zainab ka sar khula hai
sham aa raha hai....

ailaan ho raha hai jaldi bulaya jaaye
zahra ki betiyon ko paidal chalaya jaaye
koofay ki manzilon se ye sakht marhala hai
sham aa raha hai....

zainab ne jab ye poocha ye kaunsi hai basti
sajjad mere dil par lagti hai gham ki barchi
haye dabi zuban se beemar ne kaha hai
sham aa raha hai....

ye fazl se ruqayya kehti hai ay bhateeje
zainab ki mai hoo zaamin baqir tere hawale
dono ne kaam apna taqseem kar liya hai
sham aa raha hai....

zainab ke gird behne parda bana rahi hai
khud be-rida hai lekin usko chupa rahi hai
akbar sitamgaron ne ailaan kar diya hai
sham aa raha hai....