شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر،نوحہ کرے ماں

ارمان بہت تھا میں تیری شادی رچائوں
اک روز دلہن چاند سی میں بیاہ کے لائوں
پر لاش پہ روتی ہے تیری کوک جلی ماں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

زندہ تھے تمہیں دیکھ کے اب کیسے جئیںگے
سوچا تھا تیرے بیاہ کی پوشاک سیئیں گے
پر تجھ کو کفن بھی نہ ملا ہائے میری جاں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

روتی ہے پھپی جس نے تجھے لاڈ سے پالا
تم کیا گئے رخصت ہوا اِس گھر سے اُجالا
اِک باپ ضعیفی میں ہوا بے سر وساماں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

مر جائے جواں لال اگر دُور وطن سے
محروم ہو غربت کے سبب گوروکفن سے
تڑپاتا ہے اِس وقت میں کیا تنگیئِ داماں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

عباس کا صدمہ بھی ،ابھی کم نہ ہوا تھا
ایسے میں میری جاں تیرا وقتِ اجل آیا
تم مرگئے کیوں مر نہ گئی لال تیر ی ماں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

بیمار بہن تکتی ہے بیٹا تیرا رستہ
پردیس میں آئے تو رہا یاد نہ وعدہ
مقتل کیا آباد مدینہ کیا ویراں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

پھرتا ہے میری آنکھ میں اب تک وہی منظر
اے جانِ پدر نورِ نظر اے علی اکبر
ہمشکلِ نبی کہتے تھے تم کو شہہ ذیشاں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

اللہ نگہبان تمہارا میرے پیارے
ہم لوگ رسن بستہ سوئے شام سدھارے
سوتا ہے تیرے ساتھ یہیں اصغرِ ناداں
شبیہہ پیمبر اکبر ،نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

پیاسے تھے بہت پیاس یہ کس طرح بجھائی
اس چاند سے سینے پہ سناں ظلم کی کھائی
تم سوتے ہو ماں جاتی ہے بیٹا سوئے زنداں
شبیہِ پیعمبر اکبر، نوحہ کرے ماں
شاہ کا دلبر اکبر۔۔۔

ریحان یہ کیا خوب لکھا غم کا فسانہ
زہرا نے تجھے بخشا ہے لفظوں کا خزانہ
لے ہوگیا بخشش کا تیری حشر میں سماں
شبیہہِ پیعمبر اکبر ، نوحہ کرے ماں
...شاہ کا دلبر


shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar akbar, nauha kare maa

armaan bahot tha main teri shaadi rachaoon
ek roz dulhan chand si mai byaah kay laaoon
par laash pe roti hai teri kokh jali maa
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

zindan thay tumhay dekh ke ab kaise jiyengay
socha tha tere byaah ki poshak siyengay
par tujh ko kafan bhi na mila haaye meri jaan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

roti hai phuphi jis nay tujhe laad say paala
tum kya gaye rukhsat huwa is ghar say ujaala
ek baap zayeefi may huwa be sar-o-samaan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

mar jaye jawaan laal agar door watan se
mahroom ho ghurbat kay sabab gor-o-kafan se
tadpaata hai is waqt may kya tangi-e-daamaa
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

abbas ka sadma bhi, abhi kam na huwa tha
aisay may meri jaan tera waqt-e-ajal aaya
tum margaye kuyn mar na gayi laal teri maa
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

bemaar behan takti hai beta tera rasta
pardes may aaye to raha yaad na waada
maqtal kiya aabaad madina kiya veeraan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

phirta hai meri aankh may ab tak wohi manzar
ay jaan-e-pider noor-e-nazar ay ali akbar
hamshakl-e-nabi kehte thay tum ko shah-e-zeeshan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

allah nigehbaan tumhara meray pyaaray
hum log rasan basta suye shaam sidhaare
sota hai teray saath yahin asghar-e-naadan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

pyaasay thay bahot pyaas ye kis tarah bujhaai
is chaand say sine pe sina zulm ki khaayi
tum sotay ho maa jaati hai beta suye zindaan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..

rehaan ye kya khoob likha gham ka fasana
zehra ne tujhe bakhsha hai lafzon ka khazaana
le hogaya bakhshish ka teri hashr may samaan
shabih-e-payambar akbar, nauha kare maa
shaah ka dilbar..
Noha - Shabihe Payambar Akbar
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online