شبیر کا ماتم کیا زہرا سے دُعا لی
ہم ہیں نہیں فرشِ اعزائ سے کبھی خالی

خاکِ درِ زہرا سے کبھی کیا ہے سجا لی
جنت ہے کھڑی در پہ میرے بن کہ سوالی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔

سینے سے سناں کھینچ کہ فرزندِ نبی نے
لاشِ اکبر محروو کی کلیجے سے لگا لی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔

ہلنے لگی مقتل کی زمیں جب شاہِ دیں نے
برچھی علی اکبر کے کلیجے سے نکالی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔

ساحل پہ تڑپتا ہوا چھوڑ آیا لبِ نہر
غازی نے نظر مُڑ کہ بھی نہ پانی پہ ڈالی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔

مُرجھا گیا زہرا کا چمن دشتِ بلا میں
مائوں کی بھری گود یہاں ہو گئی خالی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔

لے جاتے کہاں میتِ بے شیر کو شبیر
اک ننھی سی تُربت وہیں مقتل میں بنا لی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔

ساحل پہ تڑپتا رہا عباس کا لاشہ
خیمے میں تڑپتی رہی آغوش کی پالی
شبیر کا ماتم کیا ۔۔۔۔۔


shabbir ka matam kiya zehra se dua li
hum hai nahi farshe aza se kabhi khaali

khaake dar e zehra se kabhi kya hai sajali
jannat hai khadi dar pe mere banke sawari
shabbir ka matam kiya....

seene se sina khaynch ke farzandane nabi ne
laash akbar e mehroo ki kaleje se lagaali
shabbir ka matam kiya....

hilne lagi maqtal ki zameen jab shahe deen ne
barchi ali akbar ke kaleje se nikaali
shabbir ka matam kiya....

saahil pe tadapta hua chor aaya lab e nehr
ghazi ne nazar mudh ke bhi na pani pe na daali
shabbir ka matam kiya....

murjhagaya zehra ka chaman dasht e bala may
maaon ki bhari godh yahan hogayi khaali
shabbir ka matam kiya....

lejate kahan mayyat e baysheer ko shabbir
ek nanhi si turbat wahin maqtal may banadi
shabbir ka matam kiya....

saahil pe tadapta raha abbas ka laasha
qaime may tadapti rahi aaghosh ki paali
shabbir ka matam kiya....
Noha - Shabbir Ka Matam Kiya

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online