شبیر ہے تنہا میرا عباس کہاں ہے

دو لاکھ کے نرغے میں محمد کا نشاں ہے
ہمدرد کہاں کوئی ہر اک دشمنِ جاں ہے
اب موت ہی حیدر کے دُلارے کی اماں ہے
مقتل کی قضا میں یہ زہرا کی فُغاں ہے
شبیر ہے ۔۔۔۔۔

بڑھتے ہیں لعیں ہاتھوں میں تیغوں کو سنبھالے
پتھر ہیں برستے ہوئے چلتے ہوئے بھالے
مظلوم کا اب کوئی نہیں ہے جو بچا لے
جس سمت اُٹھتی ہے نظر خنجر ہے سِناں ہے
شبیر ہے ۔۔۔۔۔

نرغے میں ستمگاروں کے غش ہے میرا دلبر
خنجر لیے آتا ہے اُدھر شمرِ ستمگر
رن میں نکل آئی ہے ادھر زینبِ مضطر
خیموں میں نبی زادیوں کی آہ و فغاں ہے
شبیر ہے ۔۔۔۔۔

انداز تصور میں جگہ پا گیا کس کا
یہ درد میرے لال کو تڑپا گیا کس کا
خنجر کے تلے بھی یہ خیال آ گیا کس کا
مظلوم سوئے نہر با حسرت کی نگاہ ہے
شبیر ہے ۔۔۔۔۔


shabbir hai tanha mera abbas kahan hai

do laakh ke narghay may mohammad ka nashan hai
hamdard kahan koi har ek dushmane jaan hai
ab maut hi hyder ke dulaaare ki ama hai
maqtal ki qaza may ye zehra ki fughaan hai
shabbir hai....

badte hai layeen haton may tayghon ko sambhale
pathar hai baraste hue chalte hue bhaale
mazloom ka ab koi nahi hai jo bachale
jis simt uthti hai nazar khanjar hai sina hai
shabbir hai....

narghay may sitamgaro ke gash hai mera dilbar
khanjar liye aata hai udhar shimre sitamgar
ran may nikal aayi hai idhar zainabe muztar
qaimo may nabi-zaadio ki aaho fughaan hai
shabbir hai....

andaz tasavvur may jaga pa gaya kiska
ye dard mere laal ko tadpa gaya kiska
khanjar ke tale bhi ye khayaal aagaya kiska
mazloom suye nehr ba hasrat ki nigah hai
shabbir hai....
Noha - Shabbir Hai Tanha

Nohaqan: Hadi Ali Khan Muslim
Download Mp3
Listen Online