شب چاک گریباں سحر گریہ کناں ہے
مخلوق خدا مائل فریاد و فغاں ہے
مابین زمین آسمان محشر کا سماں ہے
انیسویں رمضان کا یہ حال بیان ہے
تاریخ یہ وہ ہے جو قیامت سے ہے کم
اے مومنوں سر پیٹو کرو گریہ و ماتم

فارغ جو تہجد سے ہوئے فاتح خیبر
اور صحن میں آئے جونہی ہجرے سے نکل کر
بس قصد کیا ہی تھا ابھی جانے کا باہر
ہوتا کے ادا فجر کا وہ فرض مقرر
مرغابیوں نے گھیر لیا حق کے ولی کو
دروازے سے جانے نہیں دیتی تھیں علی کو
دروازے پہ

گویا ہوئے مرغابیوں سے حیدر کرار
اس انس کی دے تم کو جزا خالق غفار
نالے نہ کرو صبر کرو اے میری غمخوار
جو وقت معین ہے وہ ٹلتا نہیں زنہار
دامن کو میرے چھوڑ دو یوں اشک نہ برسائو
مسجد میں مجھے جانے دو دروازے سے ہٹ جائو
مسجد میں

پہنچے جونہی مسجد میں علی دیکھا یہ منظر
اوندھا پڑا سوتا ہے لعین اک زمین پر
جب اس کے قریب پہنچے تو گویا ہوئے حیدر
اٹھو پیروئے ابلیس شقی اور ستمگر
معلوم ہے سب کس لئے تو آیا ہے کوفہ
کس کام کے کرنے کا یہاں پر ہے ارادہ
کس کام کے

یہ کہہ کے اذان دینے لگے خلق کے مولا
محراب عبادت میں ہوئے زیب مصلےٰ
مصروف ہوئے طاعت رب میں شہہ والا
تھی فجر کی پہلی وہ رکعت پہلا وہ سجدہ
تلوار عقب سے بن ملجم نے لگائی
دو پارہ کیا سر کو جبیں تک اتر آئی
دو پارہ

سر پیٹ کے کہتے تھے نمازی کے اے جلاد
کیا کر دیا یہ خانہ حق میں ستم ایجاد
کی حق کے ولی پر یہ بھلا کس لئے بیداد
فریاد فریاد ہے فریاد ہے فریاد
اس شور و فغاں کو سنا حسنین نے جس دم
مسجد کو چلے گھر سے وہ کرتے ہوئے ماتم
مسجد کو

حسنین نے آلودہ بہ خوں باپ کو پایا
وہ بین کئے جس سے کہ منہ کو جگر آیا
پھر ایک چٹائی پہ غرض ان کو لٹایا
غم خواروں نے زخمی شہ صفدر کو اٹھایا
نہ بگڑ جائےگھر لائے مبادہ کہیں حالت
سر کھولے ہوئے ثانی زہرہ نہ نکل آئے
سر کھولے

داخل ہوئے جب گھر میں پسر باپ کو لے کر
لہ و شیون سے بپا ہو گیا محشریوں نا
تھامے ہوئے تھی بیٹی کوئی پائوں کوئی سر
آہستہ سے ہجرے میں لٹایا انہیں جا کر
تھا ورد زباں و علیا آہ و بکا میں
آواز یہی گونجتی تھی ارض و سماں میں
آواز یہی


shab chaak garebaan sahar girya kuna hai
maqluke khuda maile faryaad o fughaan hai
maa bain zameen aasman mehshar ka samaa hai
uneesveen ramzan ka ye haal bayan hai
tareekh ye wo hai jo qayamat se nahi kam
ay momino sar peeto karo girya o matam

faarigh jo tahajud se huve wo faatahe qaibar
aur sehan may aaye jyon hi hujre se nikal kar
bas khasd kiya hi tha abhi jaane ka bahar
hota ke ada fajr ka wo farze muqarar
murghabiyo ne ghayr liya haq ke wali ko
darwaze pe jaane nahi deti thi ali ko
darwaze pe....

goya huye murghabiyo se haidare karrar
is uns ki de tumko jaza khaaliqe ghaffar
naale na karo sabr karo ay meri ghamkhar
jo waqt mueyan hai wo talta nahi zinhaar
daman ko mere chordo yun ashq na barsao
masjid may mujhe jaane do darwaze se hatt jao
masjid may....

pahunche jyon hi masjid may ali dekha ye manzar
aunda pada sota hai layeen ek zameen par
jab uske qareeb pahunche to goya hue hydar
utt pairawe iblees shaqi aur sitamgar
maloom hai sab kis liye tu aaya hai koofa
kis kaam ke karneka yahan par hai irada
kis kaam ke....

ye kehke azaan dene lage khalq ke maula
mehraabe ibadat may hue zebe musalla
masroof huwe itaat may apne shahe waala
thi fajr ki pehli hi rakat pehla wo sajda
talwaar rakhab se bine muljim ne lagayi
do para kiya sar ko jabeen tak utar aayi
do para.....

sar peet ke kehte thay namazi  ke ay jallad
kya kar diya ye khana e haq may sitam ejaad
ki haq ke wali par ye bhala kis liye bedaad
faryad hai faryad hai faryad hai faryad
is shoro fughaan ko suna hasnain ne jis dum
masjid ko chale ghar se wo karte hue matam
masjid ko....

hasnain ne aaluda ba khoon baap ko paaya
wo bain kiye jis se ke moo ko jigar aaya
phir ek chataai pa gharaz unko litaya
ghamkaron ne zaqmi shahe safdar ko uthaya
ghar laaye mubada kahin haalat na bigadjaye
sar khole hue saniye zahra na nikal aaye
sar khole....

daakhil hue jab ghar may pisar baap ko lekar
maana lavo shevan se bapa hogaya mehshar
thame hue thi beti koi paun koi sar
aahista se hujre may litaaya unhe jaakar
tha warde zaban wa-aliya aaho buka may
awaaz yahi goonjti thi arzo sama may
awaaz yahi....
Noha - Shab Chak Gareban
Shayar: Mehshar
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online