نیزئہ ظلم نے کب سینہِ اکبر توڑا
قلبِ محبوبِ الٰہی دلِ حیدر توڑا
نیزئہ ظلم نے ۔۔۔

کر لیا نہر پہ قبضہ تن تنہا اُس نے
جس کے بابا نے اکیلے درِ خیبر توڑا
نیزئہ ظلم نے ۔۔۔

پِس گیا شمر کا دل دیکھ کہ حالِ اصغر
آپ نے سبطِ نبی شیشے سے پتھر توڑا
نیزئہ ظلم نے ۔۔۔

بولی لیلٰی ہوئی سرور کی بصارت زائل
تم نے کس طرح سے دم اے علی اکبر توڑا
نیزئہ ظلم نے ۔۔۔

ساتھ گھوڑوں سے گرے زینبِ مُضطر کے پسر
رَن میں دم بھائی نے بھائی کے برابر توڑا
نیزئہ ظلم نے ۔۔۔

ماں کا کہنا تھا کہ کیوں لال مجھے بھول گئے
باپ کی گود میں دم اے علی اصغر توڑا
نیزئہ ظلم نے ۔۔۔


naiza e zulm ne kab seena e akbar toda
qalb e mehboobe elaahi dile hyder toda
naiza e zulm ne....

kar liya nehr pe qabza tan e tanha usne
jiske baba ne akele dar e khyber toda
naiza e zulm ne....

pis gaya shimr ka dil dekh ke haale asghar
aap ne sibte nabi sheeshe se pathar toda
naiza e zulm ne....

boli laila hui sarwar ki basarat zaahir
tumne kis tarha se dam ay ali akbar toda
naiza e zulm ne....

sath ghodon se giray zainab e muztar ke pisar
ran may dam bhai ne bhai ke barabar toda
naiza e zulm ne....

maa ka kehna tha ke kyun laal mujhe bhool gaye
baap ki godh may dam ay ali asghar toda
naiza e zulm ne....
Noha - Seena e Akbar Toda

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online