سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے کی، مجھکو کھا گئی لوگو

فقر غربت،اُداسی،شمر کا ڈر،پیاس کی شدت
ستم اتنے ہوئے معصوم کو موت آ گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔

وہ ماں جو دھوپ میں اکثر علی اصغر کو روتی تھی
سکینہ کی قضا اُس پر قیامت ڈھا گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔

بندھے ہاتھون پہ اک بیمار لایا بہن کی میت
یہ اولادِ نبی پر کیسی غربت چھا گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔

بہن کی لاش ہاتھوں پہ لیے سجاد کہتے تھے
گلستانِ امامت کی کلی مُرجھا گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔

پدر کی خوں بھری گردن پہ بچی نے جو لب رکھے
یہ منظر دیکھ کر خود فضا گھبرا گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔

چچا بابا برادر سب کے سب تو کربلا سوئے
سکینہ کو نجانے شام کیسے بھا گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔

لکھو شوکت پڑھو سرور ، بتائو ساری دنیا کو
علی کی لاڈلی پوتی شہادت پا گئی لوگو
سکینہ شام میں مر کر ، یہی سمجھاگئی لوگو
جُدائی باپ کے سینے۔۔۔۔۔


sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene ki, mujh ko kha gayi logo

fakhad ghurbat, udaasi, shimr ka darr, pyaas ki shiddat
sitam itnay huye masoom ko maut aa gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....

wo maa jo dhoop may aksar ali asghar ko roti thi
sakina ki khaza us par qayamat dha gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....

bandhe haatho pe ek beemar laaya behan ki mayyat
ye aulaad-e-nabi par kaisi ghurbat chaa gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....

behan ki laash haatho pe liye sajjad kehtay thay
gulistaan-e-imamat ki kali murjha gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....

padar ki khoon bhari gardan pe bacchi ne jo lab rakhay
yeh manzar dekh kar khud faza ghabra gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....

chacha baba baradar sab ke sab to karbala soye
sakina ko na-jaane shaam kaise bhaa gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....

likho shaukath pado sarwar, batao saari duniya ko
ali ki laadli pothi shahadath paa gayi logo
sakina shaam may mar kar, yehi samjha gayi logo
judaai baap kay seene....
Noha - Sakina Sham May Markar
Shayar: Shaukath
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online