سکینہ شام کے زندان میں رورو کے کرتی تھی بیاں
جی نہیں سکتی تمہارے بن اے میرے بابا جاں

نیند آتی ہی نہیں دل کو سکوں ملتا نہیں
مانگنے پر بھی مجھے ہائے پانی کوئی دیتا نہیں
اب بُلا لو پاس اپنے گھُٹ رہا ہے دم یہاں
سکینہ ۔۔۔۔۔

کان زخمی ہیں میرے کُرتا بھی میرا ہے پھٹا
چھِن گئی چادر جو میری سر بھی میرا ہے کھُلا
دل سے میرے اُٹھ رہا ہے آپ کے غم کا دھواں
سکینہ ۔۔۔۔۔

کربلا سے شام تک ڈھائے گئے مجھ پر ستم
شمر نے مارے تماچے تعزیانے دم بدم
پائوں میں چھالے تھے میرے اور گلے میں ریسماں
سکینہ ۔۔۔۔۔

بھائی عابد کی سُنائوں تم کو کیسے داستاں
اُن کو زنجیروں میں جکڑا ظالموں نے بابا جاں
ہوتے نہ اُن پر ستم یہ آپ جو ہوتے یہاں
سکینہ ۔۔۔۔۔

ظلمتِ شب میں میری اماں یہ دیتی ہے صدا
اے میرے ششماہ اصغر کیوں ہوئے ماں سے جُدا
یہ بتادو میرا ننھا بھائی اصغر ہے کہاں
سکینہ ۔۔۔۔۔

شام کو گھر جاتے ہیں سب طائیرانِ آسماں
کب مدینے جائوں گی میں اے میرا تشنہ دہاں
کب ملوں گی جا کے صغریٰ سے میری جو ہے وہاں
سکینہ ۔۔۔۔۔

جب نظر آتا ہے پانی یاد آتے ہیں چچا
ہوتے جو وہ پاس میرے شمر کب کرتا جفا
چھوڑ کر مجھ کو نجانے جا چُکے ہیں وہ کہاں
سکینہ ۔۔۔۔۔

یاد میں آنکھوں سے میرے خون کے آنسو بہتے ہیں
زندہ لاشوں کی طرح اس قید میں ہم رہتے ہیں
ہم پہ گریہ کر رہے ہیں یہ زمین و آسماں
سکینہ ۔۔۔۔۔

بھائی کی چاہت کہاں اور آپ کی شفقت کہاں
سینے پہ سو جائوں میں ایسی میری قسمت کہاں
بھائی اکبر یاد آتے ہیں جو سُنتی ہوں اذاں
سکینہ ۔۔۔۔۔

سوز ہو ایک کو آتا اور ایک کو زورِ قلم
رکھیئے گا دونوں پہ اے بی بی صدا چشمِ کرم
آپ کا شاعر ہے احمد اور محسن نوحہ خواں
سکینہ ۔۔۔۔۔


sakina shaam ke zindaan may ro ro ke karti thi bayaan
jee nahi sakti tumhare bin ay mere baba jaan

neend aati hi nahi dil ko sukoon milta nahi
maangne par bhi mujhe haaye paani koi deta nahi
ab bulalo paas apne ghut raha hai dum yahan
sakina.....

kaan zakhmi hai mere kurta bhi mera hai phata
chin gayi chaadar jo meri sar bhi mera hai khula
dil se mere utt-raha hai aap ke gham ka dhuaan
sakina........

karbala se shaam tak dhaaye gaye mujh par sitam
shimr ne maare tamache taziyaane dam ba dam
paon may chaalay thay mere aur galay may reesma
sakina........

bhai abid ki sunaun kaise tumko dastaan
unko zanjeeron may jakda zalimon ne baba jaan
hote na unpar sitam ye aap jo hote yahan
sakina........

zulmate shab may meri amma ye deti hai sada
ay mere shashmah asghar kyun huye maa se juda
yeh batado mera nanha bhai asghar hai kahaan
sakina........

shaam ko ghar jaate hai sab taaerane asmaan
kab madine jaaungi mai ay mera tashna dahan
kab milungi jaake sughra se meri jo hai wahan
sakina........

jab nazar aata hai pani yaad aate hai chacha
hote jo wo paas mere shimr kab karta jafa
chod kar mujhko na jaane jaa chuke hai wo kahan
sakina........

yaad may aankhon se mere khoon ke aansun behte hai
zinda laashon ki tarha is qaid may hum rehte hai
hum pe girya kar rahe hai ye zameen-o-aasman
sakina........

bhai ki chahat kahan aur aap ki shafkhat kahan
seene pe soja-un mai aisi meri qismat kahan
bhai akbar yaad aate hai jo sunti hoon azaan
sakina........

soz ho ek ko ata aur ek ko zoore qalam
rakhiyega dona pe ay bibi sada chashme karam
aap ka shayar hai ahmed aur mohsin nowhaqan
sakina........
Noha - Sakina Shaam Ke
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online