سکینہ پر مصیبت کی گھڑی ہے

ہر ایک لمحہ ہے بچی پر مصیبت
رُلاتی ہے یتیمی کی ازیت
تماچوں پر تماچے کھا رہی ہے
سکینہ پر مصیبت ۔۔۔

چھِنے ہیں کان سے گوشوارے
ٹپکتے کان سے ہیں خون کے قطرے
رَسن بچی کی گردن میں بندھی ہے
سکینہ پر مصیبت ۔۔۔

لعیں پانی بہاتے ہیں دیکھا کر
تڑپتے ہیں اِدھر اطفالِ سرور
زباں بھی پیاس سے سوکھی ہوئی ہے
سکینہ پر مصیبت ۔۔۔

تماچے مارتا ہے شمر پیہم
بچانے کون ہے آئے جو اس دم
چچا کو یاد کر کے رو رہی ہے
سکینہ پر مصیبت ۔۔۔

رکھا ہے طشت میں شہہ کا کٹا سر
چھڑی سے ظلم کرتا ہے ستمگر
بڑی حسرت سے بچی دیکھتی ہے
سکینہ پر مصیبت ۔۔۔

چھُٹا جب سے شاہِ والا کا سینہ
گھڑی بھر بھی نہ سو پائی سکینہ
قضائ کی گود میں اب سو رہی ہے
سکینہ پر مصیبت ۔۔۔


sakina par musibat ki ghadi hai

har ek lamha hai bachi par musibat
rulaati hai yateemi ki aziyat
tamachon par tamache kha rahi hai
sakina par musibat....

chine hai kaan se yun goshware
tapakte kaan se hai khoon ke khatre
rasan bachi ki gardan may bandhi hai
sakina par musibat ki....

layeen pani bahate hai dikha kar
tadapte hai idhar atfal e sarwar
zaban bhi pyas se sookhi hui hai
sakina par musibat....

tamache maarta hai shumr payham
bachane kaun hai aaye jo is dam
chacha ko yaad karke ro rahi hai
sakina par musibat....

rakha hai tasht may sheh ka kata sar
chadi se zulm karta hai sitamgar
badi hasrat se bachi dekhti hai
sakina par musibat....

chuta jab se shahe wala ka seena
ghadi bhar bhi na so payi sakina
khaza ki godh may ab so rahi hai
sakina par musibat....
Noha - Sakina Par Musibat Ki

Nohaqan: Anjumane Aon o Mohd
Download Mp3
Listen Online