سکینہ ناز پرور قید خانے میں رسن بستہ
ستم بِن باپ کی بچی پہ ڈھاتی ہے عدُو کیسا

پدر کے سینے پر آرام جو کرتی تھی شہزادی
اندھیرے قید خانے کی زمیں پر ہے اُسے سونا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔

شاہِ والا کی پیاری کی ہے کیسی دیکھیئے غُربت
جو برسے اُس تن پر توسہارا ہے پھٹا کُرتا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔

ستم گر نے یوں کھینچا گوشواروں کو سکینہ کے
مچل کررِہ گئی بچی لہو کانوں سے بہتا تھا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔

مصائب چار سالہ شہہ کی دُختر نے سہے کیا کیا
یتیمی اور اسیری قید خانہ شمر کی ایزا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔

جو دیکھا خواب میں چہرا پِدر کا رو اُٹھی بچی
پِدر کے غم میں روئی تو ملا پُرسہ تماچوں کا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔

ڈھایا ظلم ظالم نے سکینہ پر کہا رو کر
بچا لے شمر سے اس دم نہ روئوں گی میں اب بھیّا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔

فصّی اپنے پِدر کا سر جو دیکھا طشت میں اُس نے
پھٹے دامن کو پھیلا کر کہا آجائیے بابا
سکینہ ناز پرور ۔۔۔۔۔


sakina naaz parwar qaid khane may rasan basta
sitam bin baap ki bachi pa dhaate hai adoo kaisa

pidar ke seene par aaram jo karti thi shehzadi
andhere qaid khane ki zameen par hai usay sona
sakina naaz parwar....

shahe wala ki pyari ki hai kaisi dekhiye ghurbat
jo barse os tan par to sahara hai ohata kurta
sakina naaz parwar....

sitamgar ne yun khayncha goshwaro ko sakina ke
machal kar rehgayi bachi lahoo kano se behta tha
sakina naaz parwar....

masaib chaar saala sheh ki dukhtar ne sahay kya kya
yateemi aur aseeri qaid khana shumr ki eeza
sakina naaz parwar....

jo dekha khaab may chehra pidar ka ro uthi bachi
pidar ke gham may royi to mila pursa tamachon ka
sakina naaz parwar....

dhaaya zulm zaalim ne sakina par kaha ro kar
bachale shumr se is dam na roungi mai ab bhaiya
sakina naaz parwar....

fasi apne pidar ka sar jo dekha tasht may usne
phate daman ko pehla kar kaha aajaiye baba
sakina naaz parwar....
Noha - Sakina Naaz Parwar
Shayar: Fasi
Nohaqan: Anjumane Aon o Mohd
Download Mp3
Listen Online