کہا رو کے باقر نے عابد نے بابا
سکینہ کو کیوں چھوڑ کر جا رہے ہیں
ہے بابا یہاں پر بڑا سا اندھیرا
سکینہ کو ۔۔۔۔۔

ہاں دیکھا ہے میں نے سفر میں یہ منظر
جہاں پانی ہوتا تھا اُس کو میسر
تو خود اپنے حصے کا پانی ہمیشہ
گراتی تھی یہ آپ کی بیڑیوں پر
میسر ہے اب ہم کو پانی تُو پیاسا
سکینہ کو ۔۔۔۔۔

جھکائے ہوئے اپنا سر رو رہی ہے
رہائی کی سُن کر خبر رو رہی ہے
تڑپتی ہے دادی رُباب ایسے بابا
کہ اماں بھی تھامے جگر رورہی ہے
بتائیں گے کیا گر اُنہوں نے یہ پوچھا
سکینہ کو ۔۔۔۔۔

مجھے یاد ہے خود یہ کہتے تھے دادا
مدینہ ہے اس کے سبب سے مدینہ
کہ میری نظر میں وہ گھر گھر نہیں ہے
نظر جس میں آئے نہ مجھ کو سکینہ
نہ اُس کے بنا پھر بسے گا مدینہ
سکینہ کو ۔۔۔۔۔

مدینہ ہو یا شام وکربوبلا ہو
کہ بازارودربار کا مرحلہ ہو
سناں اور ستم ہم نے جھیلے ہیں مل کر
تو پھر کیوں نہ یہ میرے دل کی صدا ہو
مجھے بھی یہیں چھوڑ جائیں اے بابا
سکینہ کو ۔۔۔۔۔

مجھے آج یاد آرہا ہے وہ لمحہ
گری تھی جو ناقے سے اک دن سکینہ
لگے آپ کی پُشت پر تازیانے
مگر آپ نے قافلہ روکے رکھا
رُکالیں یونہی قافلہ آج بابا
سکینہ کو ۔۔۔۔۔

اچانک نگاہیں پڑیں جو لحد پر
سوالات پھر لب پہ آئے نہ اکبر
سکینہ کی تربت کو سینے لگائے
پدر سے یہ کہنے لگے روکے باقر
سمجھ میں میری اب ہے بابایہ آیا
سکینہ کو ۔۔۔۔۔


kaha roke baqir ne abid se baba
sakina ko kyon chor kar ja rahe hai
hai baba yahan par bada sa andhera
sakina ko....

ha dekha hai maine safar may ye manzar
jahan pani hota tha usko mayassar
to khud apne hissay ka pani hamesha
giraati thi ye aap ke baydiyo par
mayassar hai ab humko pani to pyasa
sakina ko....

jhukaye hue apna sar ro rahi hai
rihaai ki sunkar khabar ro rahi hai
tadapti hai dadi rubab aise baba
ke amma bhi thame jigar ro rahi hai
batayenge kya gar unhone ye poocha
sakina ko....

mujhe yaad hai khud ye kehte thay dada
madina hai iske sabab se madina
ke meri nazar wo ghar ghar nahi hai
nazar jisme aaye na mujko sakina
na uske bina phir basega madina
sakina ko....

madina ho ya sham karbobala ho
ke bazaar-o-darbar ka marhala hai
sana aur sitam humne jhela hai milkar
to phir kyon na ye mere dil ki sada
mujhe bhi yahin chor jaaye ay baba
sakina ko....

mujhe aaj yaad aa raha hai wo lamha
giri thi jo naaqe se ek din sakina
lage aap ki push tp ar taaziyane
magar aapne khaafila roke rakha
rukaale yuhi khaafila aaj baba
sakina ko....

achanak nigahein padi jo lahad par
sawalaat phir lab pe aaye na akbar
sakina ki turbat ko seene lagaye
padar se ye kehne lage roke baqir
samajh may meri ab hai baba ye aaya
sakina ko....
Noha - Sakina Ko Kyon
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online